Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / علحدہ راستہ اپنانے والے کا ٹھکانہ جہنم : مفتی اعظم

علحدہ راستہ اپنانے والے کا ٹھکانہ جہنم : مفتی اعظم

ایران کے رویہ کی مذمت، حج مسلمانوں کے درمیان الفت و محبت کا ذریعہ
ریاض ۔ 2 جون (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کے مفتی اعظم اور سینئر علماء کمیٹی کے سربراہ الشیخ عبدالعزیز بن عبداللہ آل الشیخ نے ایران کی جانب سے حج سے متعلق قانونی تقاضوں اور لاگو ضوابط کی پابندی سے انکار کرنے کی شدید مذمت کی ہے۔ سعودی روزنامے ’’الریاض‘‘ کے مطابق مفتی اعظم نے باور کرایا کہ اللہ رب العزت نے حرمین شریفین کی ولایت اس مبارک مملکت سعودی عرب کو سونپی ہے لہٰذا تمام مسلمانوں کے واسطے حج کو آسان بنانے کے لیے انتظامی طور پر جو فیصلے کئے جائیں ان کو سننا اور ان کو ماننا چاہئے۔ جو کوئی اپنا علحدہ راستہ اپنائے گا وہ جہنم میں ٹھکانہ بنائے ۔انہوں نے کہا کہ قرآن کریم میں حج سے متعلق تمام آیات اس بات کو باور کراتی ہیں کہ حج ایسی عبادت ہے جو خالص اللہ عزوجل، اس کی توحید اور دین میں اخلاص کے واسطے ہے۔ یہ اللہ رب العزت کی اطاعت کا نمونہ ہے

اور یہ ذاتی مفادات کی تکمیل کے لیے فائدہ اٹھانے کا موقع نہیں۔آل الشیخ کے مطابق حج وحدت صف، وحدت کلمہ، اللہ کی اطاعت کے قیام اور ساری دنیا سے جمع ہونے والے مسلمانوں کے درمیان الفت و محبت کا ذریعہ ہے۔ اس کا مقصد مسلمانوں کے درمیان مفاہمت، مشاورت اور تعاون کی فضا عام کرنا ہے تاکہ مسلمان ایک مضبوط تعلق میں مربوط ہوجائیں یعنی ایمان اور اسلامی بھائی چارہ کا تعلق۔ ایشیا سے ، یورپ سے اور افریقہ سے تمام لوگ اللہ کے ذکر اور اس کی نشانیوں کی تعظیم کے لیے آتے ہیں۔ سعودی مفتی اعظم نے باور کرایا کہ کوئی بھی پالیسی جس کا مقصد حج کے فریضے کو راہ راست سے ہٹانا ہو وہ مجرمانہ پالیسی ہے۔ اس کے ذریعے حجاج میں جہالت کا پھیلانا، مسلمانوں پر حملہ آور ہونا یا ان میں تفرقہ پھیلانا یہ تمام امور اسلام میں مردود ہیں۔

 

ایران سے کوئی بھی عازم حج نہیں جائے گا
تہران 2 جون (سیاست ڈاٹ کام) ایران نے سرکاری طور پر اعلان کیاکہ وہ اس سال حج کے لئے یہاں سے کسی بھی عازم حج کو روانہ نہیں کرے گا۔ اس کا ادعا ہے کہ سعودی عر، ایرانی عازمین حج کو مناسب سکیوریٹی فراہم کرنے میں ناکام ہے۔ سالانہ فریضہ حج کے موقع پر دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگی پیدا ہوئی ہے۔ اس نازک مسئلہ پر گزشتہ سال سے تنازعہ پیدا ہوا ہے ۔ قبل ازیں حج کے سلسلے میں ایران کے ایک وفد نے سعودی عرب کا دورہ کیا تھا تاہم وفد میں شامل افراد نے سعودی عرب کی پیش کردہ شرائط کو قبول کرنے سے انکار کردیا اور معاہدہ پر دستخط کئے بغیر واپس ہوگئے ۔

TOPPOPULARRECENT