Saturday , September 22 2018
Home / اضلاع کی خبریں / علوم شریعت کی حفاظت کیلئے بانی جامعہ نظامیہ کے عظیم کارنامے

علوم شریعت کی حفاظت کیلئے بانی جامعہ نظامیہ کے عظیم کارنامے

نارائن پیٹ۔/14فبروری، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) حضرت شاہ محمد انوار اللہ فاروقی ؒ بانی جامعہ نظامیہ حیدرآباد کے صد سالہ عرس تقاریب کے سلسلہ میں مدرسہ دارالعلوم دینیہ جامع مسجد (شاخ جامعہ نظامیہ ) نارائن پیٹ کے زیر اہتمام ایک جلسہ بعنوان جشن شیخ الاسلام کا انعقاد عمل میں آیا جس کی سرپرستی مولانا سید شاہ محمد غیاث الدین قادری نے کی جبکہ مہم

نارائن پیٹ۔/14فبروری، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) حضرت شاہ محمد انوار اللہ فاروقی ؒ بانی جامعہ نظامیہ حیدرآباد کے صد سالہ عرس تقاریب کے سلسلہ میں مدرسہ دارالعلوم دینیہ جامع مسجد (شاخ جامعہ نظامیہ ) نارائن پیٹ کے زیر اہتمام ایک جلسہ بعنوان جشن شیخ الاسلام کا انعقاد عمل میں آیا جس کی سرپرستی مولانا سید شاہ محمد غیاث الدین قادری نے کی جبکہ مہمانان خصوصی کی حیثیت سے مولانا مفتی سید نصیر احمد نقشبندی نائب شیخ الحدیث جامعہ نظامیہ حیدرآباد، مولانا قاضی احمد سعادت علی شاہ نظامی خطیب مسجد محمدی ونپرتی، مولانا حافظ محمد الیاس نقشبندی ناظم مدرسہ انوارالبنات محبوب نگر، مولانا حافظ محمد امتیاز الرحمن ناظم مدرسہ انور محمدی محبوب نگر، مولانا سید احمد حسین اشرفی ناظم تعلیمات دارالعلوم اشرفیہ کولم پلی، مولانا حافظ محمد شفاعت علی نظامی نے شرکت کی ۔ جلسہ کا آغاز حافظ محمد فخر الدین تاج امام جامع مسجد کی قرأت کلام پاک سے ہوا جبکہ علمائے مدرسہ نے حمد و نعت سنانے کی سعادت حاصل کی۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے علمائے کرام نے کہا کہ جامعہ نظامیہ دارالترجمہ ، دائرۃ المعارف اہل خدمات شرعیہ کا نفاذ وغیرہ حضرت انواراللہ فاروقی ؒ کے عظیم کارنامے ہیں۔ جو آج بھی اپنے علمی فیضان سے مستفیض کررہے ہیں۔ علماء کرام حضرت شیخ الاسلام کی حیات و تعلیمات پر تفصیلی روشنی ڈالتے ہوئے بتایا کہ ایک طرف مذکورہ بالا اداروں کے قیام کے ذریعہ علوم شریعت کی ترویج و اشاعت کا کامکیا گیا تو دوسری طرف تصوف و سلوک کی منزلوں تک پہنچنے کیلئے وہ فتوحات مکیہ کا درس دیا کرتے تھے۔ آپؒ بیک وقت شاہانہ وقت کی تعلیم و تربیت میں مصروف ہے اور ساتھ ہی ساتھ عوام کی تعلیم و تربیت کیلئے بھی گرانقدر کارہائے نمایاں انجا م دیئے۔ بانی جامعہ نظامیہ نے اپنے دور میں اسلام اور مسلمانوں کے خلاف اٹھنے والے فتنوں کا روبی کیا اور عقیدہ اہلسنت کے تحفظ کیلئے تقریر و تحریر کے ذریعہ جدوجہد کی۔ آپؒ کے شہرہ آفاق تصانیف انور احمدی، مقاصد الاسلام، حقیقیۃ الفقہ اور اہل خدمات شریعہ سے عالم اسلام کے عوام و خواص آج بھی مستفیض ہورہے ہیں۔ جلسہ کا اختتام صلوۃ وسلام پر ہوا ۔ نظامت کے فرائض حافظ چاند پاشاہ نے انجام دیئے۔ اس موقع پر محمد رفیق چاند، عبدالرؤف چاند، محمد ریاض الدین رنگریز، غلام دستگیرچاند، تاج الدین ٹنگلی، محمد تقی موذن، سید یونس قادری کے علاوہ دیگر موجود تھے۔ مولانا کے ہاتھوں مدرسہ دارالعلوم میں زیر تعلیم طلباء میں قرآن پاک بھی تقسیم کئے گئے۔

TOPPOPULARRECENT