علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کے طلباء و طالبات کا خصوصی ورکشاپ

علیگڑھ۔ 17 مارچ (فیکس) عالمی یوم خواتین کے موقع پر علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کے طلباء کی جانب سے ایک خصوصی اسٹوڈنٹس کانفرنس 2014ء ہفتہ 8 مارچ کو ’’کنیڈی آڈیٹوریم‘‘ علیگڑھ مسلم یونیورسٹی میں منعقد ہوئی۔ اس کانفرنس کے مقررین میں برادر یحییٰ نومانی، لکھنؤ نے بعنوان "Redefining the Scial Status of Women" جناب جاوید جمیل بعنوان "Violence Against Women: Reasons & Remedies اور

علیگڑھ۔ 17 مارچ (فیکس) عالمی یوم خواتین کے موقع پر علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کے طلباء کی جانب سے ایک خصوصی اسٹوڈنٹس کانفرنس 2014ء ہفتہ 8 مارچ کو ’’کنیڈی آڈیٹوریم‘‘ علیگڑھ مسلم یونیورسٹی میں منعقد ہوئی۔ اس کانفرنس کے مقررین میں برادر یحییٰ نومانی، لکھنؤ نے بعنوان “Redefining the Scial Status of Women” جناب جاوید جمیل بعنوان “Violence Against Women: Reasons & Remedies اور ڈاکٹر اسماء زہرہ رکن عاملہ آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ نے بعنوان “Empowerment of Muslim Women Road Map” پر مخاطب کیا۔ ڈاکٹر اسماء زہرہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ اپنے خطاب میں قرآن کریم کی آیات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ کسی کام کرنے والے کے کام کو خواہ مرد ہو یا عورت ہرگز ضائع نہیں کرتا۔ اگر مرد کوئی نیکی کرے تو اس کا بدلہ اسی کو ملے گا،

اسی طرح اگر کوئی عورت نیکی کرے تو اس کا ثواب اور اجر اسی کو ملے گا۔ نیکی، جزاء، سزاء میں اسلام نے مرد و خواتین کے ساتھ عدل و انصاف کا معاملہ کیا ہے۔ ذمہ داریوں کی تقسیم میں دونوں کے علحدہ علحدہ دائرہ کار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام نے عورت کوباعزت، باوقار اور انتہائی معتبر مقام عطا کیا ہے۔ مسلم خواتین کو ماں، بہن، بیٹی اور بیوی کی حیثیت سے ام المسلم، بنت المسلم، اور زوجۃ المسلم کے سماج میں اونچا درجہ دیا گیا ہے۔ ہر رشتے کی عزت اور مرتبہ اہم ہے۔ انہوں نے Empowerment کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ سماج کے پچھڑے ہوئے طبقہ کو برابر تعلیمی، معاشی، سماجی اور سیاسی سہولتیں، حقوق و اختیارات فراہم کرکے اونچا اٹھانا اور برابر کا مقام دینا دراصل Empowerment کہلاتا ہے۔ Empowerment کے معنی Power قوت کے نہیں بلکہ Empowerment کے معنی و مفہوم کو سمجھنے میں اکثر خواتین غلطی کرتی ہیں اور مثبت سوچ کے بجائے منفی سوچ کو اپنا لیتی ہیں جس کی وجہ سے گھر اور خاندان انتشار اور بربادی کا شکار ہورہے ہیں۔ Empowerment کے اسلامی نکتہ نظر کو پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ Empowerment کے معنی ہے خواتین کو باشعور بنانا، ان کی تعلیم و تربیت پر توجہ دینا، انہیں ہنرمند بنانا، ان کی قابلیت و صلاحیت میں اضافہ کرنا، انہیں ذہین و دانشمند بنانے کی کوشش کرنا اور مثبت انداز میں ان کی تعمیر و ترقی کیلئے کوشش کرنا ہے۔ اس اعتبار سے تعلیم یافتہ، معاشی طور پر مضبوط اور سماجی اور سیاسی شعور رکھنے والی خاتون کو Empowered خاتون کہتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT