Sunday , November 19 2017
Home / Top Stories / علیگڑھ میں گاؤرکھشکوں کے ہاتھوںچار افراد کی پٹائی

علیگڑھ میں گاؤرکھشکوں کے ہاتھوںچار افراد کی پٹائی

گاؤرکھشہ کے نام پر غنڈہ گردی کے خلاف وزیراعظم کی وارننگ بے اثر ،حملہ آور آزاد ، متاثرین سے پوچھ گچھ
علیگڑھ ۔ 10 اگست (سیاست ڈاٹ کام) گائے کے ماؤرائے قانون تحفظ کے ایک اور واقعہ میں سخت گیر ہندوتوا تنظیم بجرنگ دل کے کارکنوں نے مبینہ طور پر ان چار افراد کی پٹائی کی جن کے بارے میں انہیں شک تھا کہ وہ اس شہر کے مضافاتی گاؤں جرڈلی میں گائیوں کا سرقہ کررہے ہیں۔ یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب بجرنگ دل کے ضلع صدر کیدارسنگھ کی قیادت میں گاؤرکھشکوں نے بھینسوں کو منتقل کرنے والی ایک میٹاڈور ویان روکنے کی کوشش کی۔ تاہم ڈرائیور نے گاڑی روکنے سے انکار کردیا تھا، جس کے ساتھ ہی نام نہاد گاؤرکھشکوں نے ہنگامہ شروع کردیا۔ اس گروپ کے دیگر ارکان بھی وہاں پہنچ گئے اور سڑک کی ناکہ بندی کردی۔ چنانچہ میٹاڈور میں سوار چار افرادگاڑی سے چھلانگ لگاتے ہوئے جان بچانے کیلئے بھاگنے لگے تاہم پولیس نے کہا کہ گاؤرکھشکوں نے ان چاروں افراد کو پکڑ لیا اور سڑک پر جمع شدہ ہجوم نے ان افراد کی خوب پٹائی کی۔

بجرنگ دل کارکنوں نے الزام عائد کیا کہ ان چار افراد کا رویہ مشتبہ تھا اور ان افراد پر مویشیوں کے سرقہ کا الزام عائد کیا۔ پولیس کے مطابق چار افراد کو حراست میں لیتے ہوئے پوچھ گچھ کی جارہی ہے۔ یہ بھی ایک مضحکہ خیز حقیقت ہیکہ مرکزی وزارت داخلہ نے گذشتہ شام ایک مشاورتی نوٹ میں تمام ریاستوں کو ہدایت کی تھی کہ گاؤرکھشا کے نام پر قانون کو ہاتھ میں لینے والوں سے کوئی مروت نہ کی جائے اور ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔ اس مشاورتی نوٹ کی اجرائی سے دو دن قبل خود وزیراعظم نریندر مودی نے بھی گاؤرکھشا کے نام پر حملوں کی مذمت کی تھی۔ مودی نے عوام پر زور دیا تھا کہ ملک اور سماج کو منقسم کرنے والے جعلی و فرضی رکھشکوں سے چوکس رہیں۔ انہوں نے ریاستی حکومتوں کو ایسے افراد کے خلاف سخت کارروائی کی ہدایت بھی کی تھی۔

TOPPOPULARRECENT