Monday , April 23 2018
Home / شہر کی خبریں / عمارتوں کی تعمیر کے لیے درخواستوں کی اندرون 21 یوم یکسوئی

عمارتوں کی تعمیر کے لیے درخواستوں کی اندرون 21 یوم یکسوئی

غیر مجاز تعمیرات کو روکنے بلدیہ کی ہدایت نظر انداز ، آن لائن درخواستوں کی وصولی
حیدرآباد۔22 ۔ جنوری (سیاست نیوز) شہر حیدرآباد میں عمارتوں کی تعمیر کے اجازت نامہ کیلئے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد نے درخواست کی یکسوئی کی مدت میں مزید کمی کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور کہا جارہا ہے کہ آئندہ ماہ سے اندرون 21 یوم ان درخواستوں کی یکسوئی عمل میں لائی جائے گی لیکن جی ایچ ایم سی کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے کئے گئے اس فیصلہ کو قابل عمل بنایا جانا ممکن نظر نہیں آتا کیونکہ بلدیہ میں عملہ کی کمی کے سبب داخل کی گئی درخواستوں کی یکسوئی سے قبل شخصی طور پر جائے تعمیر کا جائزہ لینا ناگزیر ہوتا ہے۔ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے حدود میں تعمیری اجازت ناموں کے بغیر نئی تعمیرات کو روکنے کے احکامات پر سختی سے عمل آوری کی ہدایت کے باوجود جی ایچ ایم سی عہدیدار غیر مجاز و غیر قانونی تعمیرات کو روکنے میں ناکام ہے کیونکہ ان کا استدلال ہے کہ جب وہ کسی غیر مجاز یا غیر قانونی عمارت کی تعمیر کو رکوانے کیلئے پہنچتے ہیں تو انہیں سیاسی دباؤ کا سامنا ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ کسی بھی نئی تعمیر کو فوری روکنے کیلئے کی جانے والی کوششوں کو کامیاب بنانے عملہ کی ضرورت ہوتی ہے۔ حکومت تلنگانہ نے شہری علاقوں بالخصوص حیدرآباد میں بغیر اجازت تعمیرات کے خلاف سخت موقف اختیار کرنے کی ہدایت جاری کی ہے لیکن ان ہدایات پر عمل آوری ممکن نہیں ہو پارہی ہے۔ گزشتہ برسوں کے دوران شہر حیدرآباد میں بارش کے سبب پیدا شدہ صورتحال کا جائزہ لینے کے بعد ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق مسٹر کے ٹی راما راؤ نے اس بات کا اعلان کیا تھا کہ اندرون 100 یوم جی ایچ ایم سی حدود میں تالابوں کے شکم اور نالوں پر کی گئی تعمیر کو برخواست کیا جائے گا ۔ لیکن ان احکامات کے بعد کئے گئے سروے پر عمل آوری اب بھی باقی ہے۔ عہدیداروں نے بتایا کہ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد کے علاقوں میں موجود نالوں پر سینکڑوں کیلو میٹر تک قبضہ جات موجود ہیں جنہیں منتقل کیا جانا ناگزیر ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ حکومت کی جانب سے نالوں کے قریب بسائی گئی غریب بستیوں کے مکینوں کو حکومت کی جانب سے فلیٹس کی فراہمی کے ذریعہ منتقل کرنے کا منصوبہ ہے۔ اسی لئے تاخیر ہورہی ہے۔ امکنہ اسکیم کی تعمیر کے ساتھ ساتھ نالوں کے قریب بسنے والوں کو منتقل کرنے کے اقدامات بھی کئے جائیں گے۔ جی ایچ ایم سی کے شعبہ ٹاؤن پلاننگ کے ایک اعلیٰ عہدیدار نے بتایا کہ ریاستی حکومت کے احکامات کے مطابق بلدیہ اس بات کو یقینی بنانے کی کوشش کرے گی کہ تعمیراتی اجازت ناموں کیلئے داخل کی جانے والی درخواستوں کی معینہ مدت میں یکسوئی کردی جائے ۔ حکومت کا یہ ماننا ہے کہ تعمیراتی اجازت ناموں کے حصول میں ہونے والی تاخیر و مشکلات کے سبب شہری اجازت حاصل کرنے سے گریز کرتے ہوئے تعمیرات شروع کردیتے ہیں ، اسی لئے حکومت نے آن لائین درخواستوں کی وصولی اور ان کی عاجلانہ یکسوئی کو یقینی بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT