Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / عنقریب الیکٹرانک ای ۔ رکشا متعارف، محکمہ ٹرانسپورٹ سے اقدامات مکمل

عنقریب الیکٹرانک ای ۔ رکشا متعارف، محکمہ ٹرانسپورٹ سے اقدامات مکمل

حیدرآباد ۔ /13 اکٹوبر (راست) ریاست کی سڑکوں پر بہت جلد ای رکشا دکھائی دیں گے جو کہ الیکٹرانک پر مشتمل رہیں گے ۔ اس کیلئے تمام تر تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں ۔ ای رکشا فراہمی کیلئے محکمہ ٹرانسپورٹ نے مسلمہ 6 ڈیلرس کو اجازت دی ہے ۔ جن میں 2 مقامی اور 4 غیر مقامی ادارے ہیں ۔ ملکی راجدھانی دہلی کے علاوہ ملک کے دیگر شہروں میں ای رکشا کافی تعداد میں چلائے جارہے ہیں اور ریاست کی سڑکوں پر بھی چلائے جائیں گے ۔ اسی مناسبت سے ریاست میں ای رکشا کی مانگ ہوگی ۔مقامی طور پر ای رکشا کی تیاری کیلئے دو کمپنیوں نے اقدامات شروع کردیئے ہیں اور ای رکشا کی قیمت تقریباً 1.50 لاکھ روپئے ہوسکتی ہے ۔ بیاٹری ایک مرتبہ چارج کرنے پر 40-70 کیلو میٹر سفر کیا جاسکتا ہے اور ای رکشا کیلئے پرمٹ کی ضرورت نہیں ہوگی جبکہ آٹو کے ساتھ تمام گاڑیوں کیلئے پرمٹ کا حصول لازمی ہے ۔ جبکہ ای رکشا کو مرکزی ٹرانسپورٹ قوانین کے مطابق پرمٹ سے مستثنیٰ رکھا گیا ہے ۔ پولیوشن سے پاک ماحول فراہم کرنے کے مقصد سے یہ سہولت فراہم کی گئی ہے مگر ریاستی ٹرانسپورٹ قوانین کے مطابق چند قیود رہیں گی ۔ مثلاً 20 برس سے زائد عمر کے افراد کو ہی ای رکشا چلانے کی اجازت دی جائے گی ۔ اور ای رکشا ڈرائیورس کیلئے لازمی تعلیم کم از کم آٹھویں جماعت کامیاب ہونا ضروری ہوگا اور آٹو و لائٹ ویٹ گاڑیوں کا لائسنس رکھنے والوں کو ہی اجازت ہوگی اور یہ لائسنس حاصل ہوئے کم از کم ایک سالہ مدت گزری ہو اور جدید ای رکشا ڈرائیورس کو خصوصی لائسنس حاصل کرنا ہوگا ۔ ڈیلرس کی جانب سے فراہم کی جانے والی 10 روزہ تربیت میں شرکت کرنے والوں کو ہی خصوصی لائسنس جاری کیا جائے گا اور ڈرائیورس کو فٹنس سرٹیفکیٹ پیش کرنا ہوگا ۔ عظیم تر بلدیہ حیدرآباد میں اس کی اجازت نہیں ہوگی ۔ تاحال عظیم تر بلدیہ کی حدود میں 50 لاکھ سے زائد گاڑیاں دوڑ رہی ہیں ۔ اس مناسبت سے حکومت نے گریٹر کے احاطہ میں ای رکشا کی اجازت نہیں دی ہے ۔ ایک گھنٹہ میں 25 کیلو میٹر کی رفتار سے چلنے والے ای رکشا سے ٹریفک مسائل پیدا ہونے کے اندیشہ سے اجازت نہیں دی ہے ۔ اور شہر کے مضافاتی علاقوں میں کہیں بھی چلائے جاسکتے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT