Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / عوامی اور طلبہ کے مسائل پر موثر جوابات ، طلبہ کا افراد خاندان کیساتھ پارلیمنٹ کا مشاہدہ

عوامی اور طلبہ کے مسائل پر موثر جوابات ، طلبہ کا افراد خاندان کیساتھ پارلیمنٹ کا مشاہدہ

ملکاجگری رکن پارلیمنٹ ملاریڈی کے عوام سے جوابات کی طلبی ، مسائل کو حل کرنے کاعزم

حیدرآباد۔ 20 ڈسمبر (سیاست نیوز) تاریخ میں پہلی مرتبہ پارلیمنٹ میں عوامی حصہ داری کے مقصد سے رکن پارلیمنٹ ملکاجگری سی ملاریڈی کی جانب سے شروع کردہ ’’آپ کے سوال کو میں پوچھوں گا‘‘ پروگرام کو بہترین پذیرائی ملی ہے۔ اس پروگرام کے تحت طلبہ کو ایک سنہرا موقع فراہم کیا گیا ہے۔ انہوں نے عوامی نمائندے کی حیثیت سے عوامی رائے حاصل کرنے کی کوشش کی ہے۔ ملاریڈی نے ماہ گزشتہ 13 تاریخ کو اپنے حلقہ پارلیمنٹ کے کئی اسکولس کو خطوط ارسال کرکے سوال نامہ روانہ کیا اور بتایا کہ وہ پارلیمنٹ میں آپ کے سوالات پیش کریں گے۔ بہترین سوالات کرنے والے طلبہ کی فہرست تیار کرکے قرعہ کے ذریعہ تین طلبہ منتخب کرکے ان کو والدین کے ساتھ دہلی میں پارلیمنٹ سیشن کا مشاہدہ کروانے کا بھی عزم ظاہر کیا۔ اس طرح ایک ماہ کے اندر 12 ہزار سے 37 سوالات کو منتخب کیا گیا ہے۔ ملاریڈی جنوری میں ہونے والے پارلیمنٹ سیشن کے مشاہدہ کیلئے طلبہ اور ان کے افراد خاندان پر مشتمل تقریباً 150 افراد کو دہلی لے جانے کے انتظامات کررہے ہیں۔ چند اہم سوالات ملاحظہ کریں:
(1) ایک ملک ایک ٹیکس کی بنیاد پر جی ایس ٹی پر عمل آوری ہورہی ہے، کیا اس طرح تمام سرکاری، غیرسرکاری، کارپوریٹ، تعلیمی اداروں میں بھی ایک ہی فیس وصولی سے متعلق نظام کی ضرورت ہے؟ عالمی سطح پر تعلیمی میدان میں مثال قائم کرنے والے فن لینڈ کے طریقہ تعلیم کو لاگو کرنے کی کوئی تجویز ہے؟
(2) جس طرح عوامی دولت کی جانکاری کیلئے آدھار اور پیان کو مربوط کیا جارہا ہے، اسی طرح تعلیم اور علاج و معالجہ کو مربوط کیوں نہیں کیا جاتا؟
(3) ریلوے میں خواتین کیلئے ایک اور جنرل کیلئے دو بوگیاں لگائی جارہی ہیں، کیا ان بوگیوں میں اضافہ کرتے ہوئے خواتین کیلئے 2 اور جنرل کیلئے 6 بوگیاں لگانے کے اقدامات کئے جارہے ہیں؟
(4) علاج کیلئے ریاست کے دور دراز مقامات سے مریضوں کو حیدرآباد آنا پڑتا ہے۔ آخر ہر ضلع میں ایک سوپر اسپیشالیٹی دواخانہ قائم کیوں نہیں کیا جارہا ہے؟
(5) اسکولی طلبہ کتابوں کے بڑے بیاگس اٹھاکر مشکلات کا سامنا کررہے ہیں۔ پارلیمنٹ کے ذریعہ اس سسٹم کو ختم کرنے کے اقدامات کئے جائیں۔
(6) ڈیزل اور پٹرول کو جی ایس ٹی میں شامل کیا جائے؟
(7) بورلام، سکندرآباد اور کاچی گوڑہ ریلوے اسٹیشنوں کے درمیان لوکل ٹرینیں چلائی جائیں۔
(8) ذات پات سے ہٹ کر معاشی طور پر کمزور افراد کو تحفظات فراہم کئے جائیں اور فن لینڈ نے طریقہ تعلیم کو لاگو کیا جائے اور ٹیکس سسٹم کو ختم کرتے ہوئے بینکنگ ٹرانزیکشن ٹیکس سسٹم لاگو کیا جائے۔
(9) اکثر و بیشتر دکاندار جی ایس ٹی کی آڑ میں ہر چیز پر زائد پیسہ وصول کررہے ہیں، اسے روکا جائے۔
(10) غریبوں کیلئے حکومت کی جانب سے آروگیہ بیمہ اسکیم شروع کی جائے۔
(11) سینک اسکول کا قیام ملکاجگری حلقہ میں عمل میں لایا جائے۔
(12) میٹرو ریل، شہر کے مضافاتی علاقوں تک توسیع کی جائے۔
(13) دہلی میں فضائی آلودگی میں زبردست اضافہ کے پیش نظر ۔ہے دیگر شہروں کو آلودگی سے بچانے کیلئے کیا اقدامات کئے جارہے ہیں۔
(14) نیپکنس کو جی ایس ٹی میں شامل کرنے سے غریب افراد کیسے خرید سکتے ہیں۔
(15) نوٹوں کی تنسیخ کے بعد رشوت میں مزید اضافہ ہوا ہے، اس کے تدارک کیلئے کیا اقدامات کئے جارہے ہیں؟
(16) سرکاری اسکیمات و سرکاری آئیڈیالوجی سے عوام کو واقف کرنے کیلئے وارڈ کی سطح پر انتظامات کئے جائیں۔
(17) ہفتہ میں کم از کم اسکولس میں گیمس سے متعلق دو کلاسیس چلائے جائیں۔
(18) اسکولس کی لائبریریز میں دیگر زبانوں پر مشتمل کتب بھی فراہم کی جائیں۔
(19) نوٹوں کی تنسیخ سے کتنا کالا دھن ملا اور جی ایس ٹی سے عوام کو کیا فائدہ ہے؟
(20) ہر دن قیمتوں میں اضافہ ہی ہورہا ہے اور کسی بھی طرح کی کمی نہیں ہورہی ہے، اس مناسبت سے کیا اقدامات کئے جائیں گے؟

TOPPOPULARRECENT