عوام کے برے دن آگئے ‘ مودی حکومت مایوس کن

لکھنو۔14جون ( سیاست ڈاٹ کام ) نریندر مودی حکومت یو پی اے کے نقش قدم پر چل رہی ہے ۔ بی ایس پی کی صدر مایاوتی نے کہا کہ این ڈی اے کا ایک سالہ دور اقتدار ’’مایوس کن ‘‘ تھا اور عوام کو ’’ برے دنوں ‘‘ کا تجربہ ہوگیا ۔ مایاوتی نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اپنی ناقص پالیسیوں اور کارروائیوں کے ذریعہ مودی حکومت نے ایک سال میں ع

لکھنو۔14جون ( سیاست ڈاٹ کام ) نریندر مودی حکومت یو پی اے کے نقش قدم پر چل رہی ہے ۔ بی ایس پی کی صدر مایاوتی نے کہا کہ این ڈی اے کا ایک سالہ دور اقتدار ’’مایوس کن ‘‘ تھا اور عوام کو ’’ برے دنوں ‘‘ کا تجربہ ہوگیا ۔ مایاوتی نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اپنی ناقص پالیسیوں اور کارروائیوں کے ذریعہ مودی حکومت نے ایک سال میں عوام کو مایوس کردیا ہے اور صرف برے دن دکھائے ہیں۔ حکومت نے عوام کو جو اُمید دلائی تھی وہ اب غائب ہورہی ہے ۔ بی جے پی اور اُس کے حامی اب رام مندر مسئلہ اٹھارہے ہیں حالانکہ یہ معاملہ عدالت میں زیر دوران ہے ۔ موجودہ حکومت بھی قومی اور مفاد عامہ کے مسائل کے سلسلہ میں سابق یو پی اے حکومت کے مماثل ہے ۔ عوام نے محسوس کرلیا ہے کہ سابق کانگریس اور بی جے پی ایک ہی سکے کے دو رُخ ہے ۔ دونوں سرمایہ داروں کے اشاروں پر ناچ رہے ہیں ۔ ان کی کارروائیاں اور کارنامے مختلف ہوسکتے ہیں لیکن اُن کے مقاصد یکساں ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے ارکان پارلیمنٹ پُرغرور ہیں کیونکہ پارٹی کو اکثریت حاصل ہوگئی ہے ۔ مایاوتی نے کہا کہ وہ خود احتسابی کرنا نہیں چاہتے ‘ اسی وجہ سے عام آدمی بلکہ ان کے حامی اُن سے چھٹکارہ حاصل کرنا چاہتے ہیں ۔ ذرائع ابلاغ کے سروے سے بھی پتہ چلتا ہے کہ ’’ مودی کا جادو ٹوٹ چکا ہے ‘‘ ۔ مرکزی اسکیمیں جیسے جن دھن ‘ جیون جیوتی اور انشورنس اسکیم جس کی بہت زیادہ تشہیر کی گئی ہے صرف ’’ آنسو پونچنے‘‘ کے مترادف ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ غریب عوام کو ان اسکیموں کے ذریعہ جن پر مرکزی حکومت ’’ ایک پیسہ بھی خرچ نہیں کررہی ہے‘‘ خواب دکھائے ہیں ۔ مودی حکومت مذہبی اقلیتوں کو دہشت زدہ کررہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اندیشہ ہے کہ یہ حکومت گجرات جیسا ماحول پیدا کرے گی جس کے ذریعہ مسلمانوں اور عیسائیوں کو اپنے غیر محفوظ ہونے کا احساس ہوگا اور بیرون ملک ہندوستان بدنام ہوجائے گا ۔

TOPPOPULARRECENT