Monday , November 20 2017
Home / شہر کی خبریں / عیدالاضحیٰ کے موقع پر صاف صفائی اور امن و امان کی برقراری پر شعور بیداری

عیدالاضحیٰ کے موقع پر صاف صفائی اور امن و امان کی برقراری پر شعور بیداری

پلاسٹک تھیلوں کی سربراہی ، ابنائے وطن کو تکلیف نہ پہونچانے کی خواہش
حیدرآباد۔14اگسٹ (سیاست نیوز) عیدالاضحی کے موقع پر صاف صفائی اور شہر میں امن و امان کی برقراری کے سلسلہ میں مختلف تنظیموں اور اداروں کی جانب سے کئی اقدامات کئے جانے لگے ہیں جن میں بڑے جانور کی قربانی سے اجتناب کے علاوہ شہر میںعیدالاضحی کے موقع پر صفائی کو بہتر بنانے اور جانور کے خون کو سڑکوں پر نہ بہانے کیلئے اقدامات کے متعلق شعور بیداری مہم چلائی جانے لگی ہے۔ گذشتہ چند برسوں سے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کی جانب سے شہر میں قربانی کرنے والے گھروں تک پلاسٹک کے بڑے تھیلے فراہم کئے جا رہے ہیں تاکہ گندگی کو یکجا کرتے ہوئے پھینکنے میں سہولت ہو۔ عیدالاضحی کے موقع پر صفائی کے لئے متعدد گوشوں سے اپیل کرتے ہوئے دین اسلام میں صفائی کی اہمیت کو اجاگر کیا جا رہا ہے تاکہ لوگوں کو اس بات کا احساس دلایا جاسکے کہ قربانی کے فرض کی ادائیگی میں اس بات کو فراموش نہ کریں کہ پاکی آدھا ایمان ہے۔ علماء و دانشوروں کے علاوہ اس مہم میں کئی تنظیموں کے ذمہ دار شامل ہیں جو عیدا لاضحی کے موقع پر صفائی کے خصوصی انتظامات کے متعلق عوامی شعور اجاگر کرنے میں کلیدی کردار ادا کر رہے ہیں اور عوام میں یہ احساس پیدا کر رہے ہیں کہ وہ اپنی قربانی کے ذریعہ دیگر ابنائے وطن کو تکلیف نہ پہنچائیں بلکہ سڑکوں پر خون بہانے سے اجتناب کرتے ہوئے اپنی گلیوں اور محلوں کی صفائی کو ممکن بنانے کے اقدامات کریں۔شہر حیدرآباد و سکندرآباد کے کئی اضلاع میں صفائی کی اس مہم کے ساتھ ساتھ بڑے جانور کی قربانی سے اجتناب کی ترغیب بھی دی جا رہی ہے اور کہا جا رہا ہے کہ موجودہ حالات کو دیکھتے ہوئے بڑے جانور کی قربانی سے اجتناب کیا جانا چاہئے کیونکہ اس عمل سے نقص امن کا خطرہ ہے ۔ اس سلسلہ میں کئی علماء و دانشوروں نے گذشتہ دنوں ایک مشورتی اجلاس طلب کرتے ہوئے قرار داد منظور کرتے ہوئے مسلمانوں سے اپیل کی کہ ملک میں امن و امان کی برقراری کیلئے بڑے جانور کے ذبیحہ سے اجتناب کیا جائے ۔ مولانا سید طارق قادری نے بتایا کہ ملک میں شرپسند عناصر کی سرگرمیوں کو روکنے کیلئے جو حکمت عملی اختیار کی جانی چاہئے اس پر سنجیدگی سے غور کرتے ہوئے ہر شخص کو اپنے طور پر یہ فیصلہ کرنا چاہئے کہ وہ بڑی جانور کی قربانی کو صرف 2برس کے لئے ترک کردیں پھر دیکھیں کہ کیا صورتحال پیدا ہوتی ہے اور اس کے کیا نتائج برآمد ہوتے ہیں ۔ جناب محمد عفان قادری نے بتایا کہ عوام میں بڑے جانور کی قربانی کو مختصر مدت کیلئے ترک کرنے کا رجحان پیدا ہونے لگا ہے اور اس رجحان کی بنیادی وجہ ملک کی موجودہ صورتحال ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اگر مسلمان قطعی طور پر کچھ وقت کیلئے بڑے جانور کا گوشت ترک کر دیتے ہیں تو ایسی صورت میں حکومت ہند کو مویشی پالنے کے لئے بھی بڑے گاؤ شالہ کھولنے پڑیں گے۔ عیدالاضحی کے موقع پر صفائی کے انتظامات کے سلسلہ میں انہوں نے بتایا کہ صرف شہر حیدرآباد یا ریاست تلنگانہ میں ہی نہیں بلکہ ملک بھر میں عیدالاضحی کے موقع پر صفائی کے خصوصی انتظامات کو ممکن بنانے کے ساتھ ساتھ قربانی کے ویڈیوز اور تصاویر سوشل میڈیا پر پوسٹ کرنے سے بھی احتیاط کرنا ضروری ہے کیونکہ اس طرح کی تصاویر اور ویڈیوز بدامنی کا سبب بن سکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT