Tuesday , October 16 2018
Home / شہر کی خبریں / عیدگاہ شادنگر کے حق میں حیدرآباد ہائیکورٹ کے احکامات

عیدگاہ شادنگر کے حق میں حیدرآباد ہائیکورٹ کے احکامات

سابقہ حکم التواء میں ترمیم، نماز عید الفطر کے انتظامات کرنے جج کی ہدایت
حیدرآباد ۔ 14 ۔جون (سیاست نیوز) حیدرآباد ہائی کورٹ نے عیدگاہ شاد نگر کی اراضی پر وقف بورڈ اور میونسپلٹی کو تعمیری کاموں کی اجازت دیتے ہوئے احکامات جاری کئے ہیں۔ اوقافی اراضی پر مقامی افراد کے دعوے کے پیش نظر جسٹس ایم سیتارام مورتی نے عبوری احکامات جاری کئے ۔ عدالت نے عیدگاہ کے تعمیری کاموں کی تکمیل اور نماز عیدالفطر کیلئے وسیع تر انتظامات کی ہدایت دی ۔ واضح رہے کہ شاد نگر میں واقع عیدگاہ کی تعمیر کیلئے مقامی بلدیہ نے 43 لاکھ روپئے منظور کئے تھے۔ تعمیراتی کاموں کے دوران مقامی شخص اننتیا اور دوسروں نے بلدیہ میں درخواست دائر کی کہ وقف کے ساتھ ان کی ذاتی اراضی کو شامل کرلیا گیا ہے۔ اسی درخواست کی بنیاد پر ہائی کورٹ کے ووکیشن بنچ سے حکم التواء حاصل کرلیا گیا۔ عدالت نے تعمیری کاموں پر روک لگا دی۔ اب جبکہ عید الفطر کیلئے نماز کے انتظامات ضروری ہیں، صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم نے ہائی کورٹ میں اسٹانڈنگ کونسل ایم اے مجیب کو دوبارہ درخواست پیش کرنے کی ہدایت دی ۔ جسٹس ایم سیتارام موتی نے سماعت کے بعد ووکیشن بنچ کی جانب سے جاری کردہ حکم التواء میں ترمیم کردی ۔ انہوں نے عیدگاہ کے تعمیری کاموں کی اجازت دیتے ہوئے مقدمہ کی سماعت آئندہ تاریخ کیلئے ملتوی کردی ۔ عدالت نے تعمیری کاموں میں مداخلت نہ کرنے کی ہدایت دی ہے۔ ہائی کورٹ کے احکامات کے ساتھ ہی وقف بورڈ اور بلدی حکام نے تعمیری کاموں کا جنگی خطوط پر آغاز کردیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ مذکورہ اراضی گزٹ نوٹیفائیڈ ہے اور ووکیشن بنچ کے حکم التواء کے بعد مقامی رکن اسمبلی کے ہمراہ مسلمانوں کے وفد نے صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم سے نمائندگی کی تھی ۔ ہائی کورٹ کے احکامات کے سبب عیدگاہ کی اراضی کے تحفظ میں وقف بورڈ کو کامیابی ملی ہے۔

TOPPOPULARRECENT