عیسائی پادری کا مستحسن اقدام چرچ میں نماز کی اجازت

لندن ۔ 13 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) برطانیہ میں چرچ کے ایک پادری نے حیرت انگیز واقعہ میں چرچ کی عمارت میں نماز پڑھنے کی اجازت دی، جس کے خلاف عیسائی شہریوں نے زبردست احتجاج کیا اور کہا کہ پادری نے گرجاگھر میں اسلامی طریقہ عبادت (نماز) کی اجازت دیکر ان کے (عیسائی) مذہبی جذبات کو مجروح کیا ہے۔ واٹرلو میں واقع سینٹ جان چرچ کے اندرونی حصہ میں ایک

لندن ۔ 13 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) برطانیہ میں چرچ کے ایک پادری نے حیرت انگیز واقعہ میں چرچ کی عمارت میں نماز پڑھنے کی اجازت دی، جس کے خلاف عیسائی شہریوں نے زبردست احتجاج کیا اور کہا کہ پادری نے گرجاگھر میں اسلامی طریقہ عبادت (نماز) کی اجازت دیکر ان کے (عیسائی) مذہبی جذبات کو مجروح کیا ہے۔ واٹرلو میں واقع سینٹ جان چرچ کے اندرونی حصہ میں ایک مسجد بھی واقع ہے۔ اس موقع پر پادری کینن گائلس گوڈارڈ جو ایک ترقی پسند پادری تصور کئے جاتے ہیں، نے اس موقع پر وہاں مسلمانوں کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے بائبل کے اقتباسات پڑھ کر سنائے اور مجمع سے خواہش کی وہ اظہارتشکر کریں کہ ہم (عیسائی) اللہ کی حمد و ثناء کرتے ہیں۔ ڈیلی ٹیلی گراف کی رپورٹ کے مطابق پادری گوڈارڈ اس واقعہ سے بیحد مسرور ہیں کیونکہ اس عمل سے وہ یہ ظاہر کرنا چاہتے ہیں کہ دنیا کا چاہے کوئی بھی مذہب ہو اس کے پیروکاروں کو عبادت کے لئے جگہ فراہم کرنا ایک اچھا اور قابل تحسین عمل ہے۔

TOPPOPULARRECENT