Monday , September 24 2018
Home / دنیا / غذائی پیاکٹس گرانے کی ’اِنسانیت نوازی ‘ میں آسٹریلیا شامل

غذائی پیاکٹس گرانے کی ’اِنسانیت نوازی ‘ میں آسٹریلیا شامل

سڈنی ، 9 اگست ( سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم آسٹریلیا ٹونی ایبٹ نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے عراقی جہادیوں کے تشدد سے متاثرہ افراد کیلئے بذریعہ طیارہ غذائی پیاکٹس اور پانی سربراہ کرنے کا جو فیصلہ کیا ہے ، آسٹریلیا بھی امریکہ کی معاونت کرے گا ۔ امریکی صدر براک اوباما نے جہادیوں کو خود مختار کردستان میں داخلہ سے روکنے کیلئے

سڈنی ، 9 اگست ( سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم آسٹریلیا ٹونی ایبٹ نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے عراقی جہادیوں کے تشدد سے متاثرہ افراد کیلئے بذریعہ طیارہ غذائی پیاکٹس اور پانی سربراہ کرنے کا جو فیصلہ کیا ہے ، آسٹریلیا بھی امریکہ کی معاونت کرے گا ۔ امریکی صدر براک اوباما نے جہادیوں کو خود مختار کردستان میں داخلہ سے روکنے کیلئے فضائی حملے کئے جانے کا اشارہ دیا ہے ۔ ہزاروں افراد ایک پہاڑی علاقہ میں پناہ لئے ہوئے ہیں جن کے پاس نہ غذا ہے اور نہ پانی اور امریکہ کی جانب سے اُن کیلئے غذائی پیاکٹس اور ہزاروں گیلن پانی طیاروں کے ذریعہ گر ایا گیا ہے ۔ سڈنی میں اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے ٹونی نے کہا کہ امریکہ کے ساتھ اس ’انسانیت نواز‘ کام میں حصہ لینے کیلئے وہ امریکی حکام سے بات چیت کررہے ہیں۔

ایک طرف عراق میں پھنسے ہوئے عیسائیوں کیلئے امریکہ اور آسٹریلیا بے چین ہوگئے ہیں لیکن اسرائیل کی جانب سے کئے جارہے متواتر حملوں میں غزہ کے بے قصور افراد کی جانوں کی مغربی ممالک کو کوئی پراہ نہیں ہے جبکہ پرنٹ میڈیا کے علاوہ الیکٹرانک میڈیا میں بھی تباہی و بربادی ، معصوم بچوں کی ہلاکت ، وسائل نہ ہونے کی وجہ سے تجہیز وتکفین کی مشکلات ، بچوں کی نعشوں کو ڈیپ فریزر میں رکھنے جیسے حالات کی تصاویر اسرائیلی ظلم و جبر کی منہ بولتی داستان ہے لیکن کسی بھی مغربی ممالک نے اسرائیل کی مذمت نہیں کی اور جنہوں نے کی بھی ہے وہ محض زبانی جمع خرچ کے سواء کچھ نہیں ۔ جب مسلم ممالک ہی دم سادھے بیٹھے ہیں تو مغربی ممالک کو مورد الزام ٹھہرانے سے کیا فائدہ ؟

کیا مصر ، کیا سعودی عرب اور کیا امارات؟ عراق ، لیبیا اور شام بھی مذمت نہیں کرسکتے کیونکہ یہ ممالک خود خانہ جنگی میں مشغول ہیں ۔ انہیں دیگر ممالک اور وہاں ہونے والی ہلاکتوں کی کیا پرواہ ہوگی ۔ حالانکہ مغربی میڈیا غزہ میں خصوصی طور پر بچوں کی ہلاکتیں دیکھ کر دہل گیا اور اطلاع کے مطابق رپورٹنگ کرنے والے روپڑے تھے لیکن ان باتوں سے کوئی فائدہ نہیں ۔ آسٹریلیا اور امریکہ اپنے ہم مذہب افراد کو بچانے کوشاں ہیں ۔ ایسا معلوم ہوتاہے کہ غزہ میں بہنے والے فلسطینی مسلمانوں کا خون پانی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT