Wednesday , January 24 2018
Home / شہر کی خبریں / غریب اور متوسط طبقہ کو ڈاکٹر بننے کیلئے بی یو ایم ایس بہترین کورس

غریب اور متوسط طبقہ کو ڈاکٹر بننے کیلئے بی یو ایم ایس بہترین کورس

یونانی طریقہ میں کئی بیماریوں کا علاج ، طب نبویؐ کو شامل نصاب پر زور ، جناب زاہد علی خاں کا خطاب

یونانی طریقہ میں کئی بیماریوں کا علاج ، طب نبویؐ کو شامل نصاب پر زور ، جناب زاہد علی خاں کا خطاب

حیدرآباد ۔ 13 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : جناب زاہد علی خاں ایڈیٹر سیاست نے یہاں عابد علی خاں آئی ہاسپٹل دارالشفاء میں بی یو ایم ایس انٹرنس کوچنگ اور لقمان یونانی میڈیکل کالج کے پانچ طالبات کی شاندار کامیابی پر تہنیتی تقریب کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ حیدرآباد میں جب میڈیکل کالجس خانگی طور پر شروع ہوئے اور خطیر رقم کے عوض یم بی بی ایس میں داخلے دینے لگے تب انہوں نے غریب اور متوسط طبقہ کے ہونہار طلبہ کو اس کے متبادل بی یو ایم ایس میں داخلے کی مہم کا آغاز کیا اور اس وقت حیدرآباد کے نظامیہ طبی کالج میں اور کرنول کے ڈاکٹر عبدالحق یونانی کالج میں مطلوبہ نشستیں پر نہیں ہورہی تھیں اور کئی نشستیں مخلوعہ رہ جاتی تھیں ۔ جب ادارہ سیاست نے بی یو ایم ایس انٹرنس کوچنگ کا آغاز کیا تو پہلے ہی سال حیدرآباد میں تمام نشستیں پر ہوئیں بلکہ کئی طلبہ کو داخلہ نہیں ملا ۔ اس طرح کرنول میں بھی داخلے مکمل ہوئے اس کے بعد ہر سال مطلوبہ نشستوں سے زیادہ طلبہ انٹرنس امتحان میں شریک ہونے سے سخت مسابقت ہورہی ہے ۔ انہوں نے یونانی طب اور تعلیم کے فروغ کے لیے ادارہ سیاست کی خدمات کو بتاتے ہوئے کہا کہ اب پڑوسی ریاست بیجا پور اور مستقبل میں مہاراشٹرا اور کرناٹک کے حیدرآباد کے پڑوسی اضلاع کو یکجا کرتے ہوئے پروگرام کو مزید وسعت دی جائے گی ۔

یونانی طب میں طب نبوی کو شامل کرنا چاہئے نصاب میں نہ ہو تو کم از کم زائد نصاب میں شامل کریں اس میں بیش بہاء نسخے اور چٹکلے ہیں جن میں کئی بیماریوں کا علاج ہے ۔ اپنی زندگی میں صحت مند اور درست رہنے کے گر بتاتے ہوئے جناب زاہد علی خاں نے کہا کہ وہ ہر صبح شہد ، کلونجی میں ایک قطرہ لیمو کا نصف النہار پابندی سے استعمال کرتے ہیں اور اس کی وجہ انہیں آج تک بخار نہیں آیا ۔ یہ چٹکلہ دراصل طب نبوی سے ماخذ ہے ۔ انہوں نے لقمان یونانی طبی کالج بیجا پور کے ہونہار طالبات جن کا تعلق حیدرآباد دکن سے ہے جنہوں نے بی یو ایم ایس کرناٹک اسٹیٹ میں ٹاپ کیا ہے ۔ اور درجہ اول میں امتیازی کامیابی حاصل کی ان کی تہنیت پیش کرتے ہوئے شال پوشی اور مومنٹوز ادارہ سیاست کی جانب سے پیش کیا ۔ ان میں ڈاکٹر سمیرہ تسکین بنت نذیر احمد خالد مرحوم جو جناب نثار احمد موظف صدر مدرس سنگاریڈی کی نبیری ہے ۔ ساری ریاست کرناٹک میں ٹاپر رہی ۔ اور مدیحہ مہرین صدیقی بنت عطا اللہ صدیقی ، فردوس بیگم بنت شبیر احمد ، زرینہ بیگم بنت محمد خواجہ صاحب مرحوم ، اسماء فاطمہ بنت شیخ وحید کو تہنیت پیش کی گئی اور انہیں لقمان یونانی کالج کے پروفیسر معالجات ، ڈاکٹر عبدالرب اعظم نے بھی تحائف اور انعامات عطا کئے ۔ ڈاکٹر سید غوث الدین سابق مشیر یونانی حکومت اے پی نے ابتداء میں خیر مقدم کرتے ہوئے ادارہ سیاست کے تعلیمی ، سماجی اور صحت عامہ کے لیے جاری خدمات کے حوالے سے کہا کہ جناب زاہد علی خاں کی سرپرستی اور جناب ظہیر الدین علی خاں اور جناب عامر علی خاں کا بھر پور تعاون اور شخصی دلچسپی سے تمام کام جاری ہیں ۔

ڈاکٹر عاقل قادری پرنسپل لقمان یونانی کالج بیجا پور نے مہمان خصوصی کی حیثیت سے شرکت کرتے ہوئے اپنی تقریر میں یونانی طب و تعلیم کی تاریخ کو سہل انداز میں پیش کیا اور بتلایا کہ لفظ یونانی یونان سے نکلا ، عرب پہنچا پھر یورپ اسپین سے ہوتا ہوا ایران سے ہندوستان آیا ۔ ہندوستان میں یونانی طب کو حکیم اجمل خاں اور حکیم کبیر الدین نے فروغ دینے میں گرانقدر خدمات انجام دیں ۔ حکیم کبیر الدین نے فارسی سے اس کو اردو زبان میں منتقل کیا اور آج ہندوستان میں یونانی طب و تعلیم پھیلا ہوا ہے ۔ اور ایورویدک ، ہومیو پیتھی کی طرح ہندوستانی طریقہ طب میں یونانی شامل ہے ۔ پروگرام کا آغاز قرات سے ہوا ۔ پھر حمد و نعت پیش کی گئی ۔ کیرئیر کونسلر سیاست ایم اے حمید نے نظامت کے فرائض انجام دئیے ۔ اس موقع پر طلبا و طالبات کے علاوہ سرپرستوں کی کثیر تعداد موجود تھی ۔ پروفیسر اکبر علی ، کلیم جلیلی نے طلبہ کی رہنمائی کی ۔ آخر میں خالد محی الدین اسد نے شکریہ ادا کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT