Wednesday , December 13 2017
Home / شہر کی خبریں / غریب مسلمانوں کو آٹو رکشا فراہم کرنے کی اسکیم میں تاخیر

غریب مسلمانوں کو آٹو رکشا فراہم کرنے کی اسکیم میں تاخیر

مستحق امیدواروں کے انتخاب میں مزید وقت درکار
حیدرآباد۔/3نومبر، ( سیاست نیوز) غریب مسلمانوں کیلئے حیدرآباد اور رنگاریڈی میں 1000آٹو رکشا فراہم کرنے سے متعلق اسکیم میں کسی قدر تاخیر کا امکان ہے۔ درخواستوں کی جانچ میں تاخیر کے سبب 11نومبر کو آٹو رکشاؤں کی اجرائی ممکن نہیں ہے۔ حکومت نے یوم اقلیتی بہبود کے موقع پر 11نومبر کو ایک ہزار آٹو رکشا جاری کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ منیجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ نے بتایا کہ مستحق امیدواروں کے انتخاب میں مزید کچھ وقت درکار ہے لہذا 11نومبر کے بعد کسی دن یہ تقریب منعقد کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ حیدرآباد اور رنگاریڈی سے 2800درخواستیں داخل کی گئی ہیں جن کی جانچ کا کام متعلقہ ایکزیکیٹو ڈائرکٹرس کو سونپا گیا ہے۔ ایکزیکیٹو ڈائرکٹرس نے اہل امیدواروں کی فہرست کارپوریشن کے ہیڈکوارٹر میں داخل کی ہے جہاں سینیاریٹی کی بنیاد پر انتخاب کیا جائے گا۔ لائسنس کی مدت یا پھر عمر کے لحاظ سے سینیاریٹی کا تعین ہوگا۔ فینانس کارپوریشن اس فہرست کو ٹرانسپورٹ کمشنر سے رجوع کرے گا جو اس بات کا جائزہ لیں گے کہ آیا درخواست گذار کے نام پر پہلے ہی سے آٹو موجود تو نہیں۔ بی شفیع اللہ کے مطابق ٹرانسپورٹ کمشنر کے کلیئرنس کے بعد بینکوں سے منظوری حاصل کی جائے گی۔ اس سلسلہ میں مختلف بینکرس سے مذاکرات کا عمل ابھی جاری ہے۔ اسکیم کے تحت کارپوریشن آٹو کی مالیت کی 50فیصد رقم بطور سبسیڈی جاری کرے گا جبکہ باقی 50فیصد بینک بطور قرض جاری کریں گے۔ بینک سے منظوری کے بعد امیدوار کے اکاؤنٹ میں سبسیڈی کی رقم جمع کی جائے گی جبکہ بینک اپنی رقم کا حصہ آٹو ڈیلر کو جاری کرے گا۔ انہوں نے بتایا کہ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی سے مشاورت کے بعد آٹو رکشا اسکیم کے آغاز کی تاریخ کا تعین کیا جائے گا۔ حکومت حیدرآباد اور رنگاریڈی میں اس اسکیم کے آغاز کے بعد اسے ہر ضلع میں توسیع دینے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ ہر ضلع میں 500 آٹوز جاری کرنے کا منصوبہ ہے۔

TOPPOPULARRECENT