Saturday , November 18 2017
Home / عرب دنیا / غریب ومتوسط سعودی طبقے کیلئے نیا سبسیڈی پلان تیار

غریب ومتوسط سعودی طبقے کیلئے نیا سبسیڈی پلان تیار

ریاض ۔ 19 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور کابینہ میں اقتصادی کونسل کے صدرنشین شہزادہ محمدبن سلمان نے کہا ہے کہ شہریوں کے لیے بنیادی اشیاء پر سبسیڈی کم ہونے کے منفی اثرات کے ازالے کے لیے ایک جامع پرگرام ترتیب دیا گیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ دنیا کو تیل کا بڑا برآمد کنندہ ملک ہونے کے باوجود معیشت کے شعبے میں ما بعد تیل کے دور کو سامنے رکھتے ہوئے اصلاحات لانا چاہتے ہیں۔ الدرعیہ میں شاہی فارم ہاؤس میں ایک انٹرویو میں شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ حکومت نے کم اور متوسط آمدنی رکھنے والے شہریوں کے لیے نقد امداد کا لائحہ عمل تیار کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے حکومت کسی صورت میں ایک عام سعودی شہری کی زندگی کے معمولات میں تبدیلی نہیں لانا چاہی۔ ہم قدرتی وسائل کا بے دریغ استعمال کرنے والے امیر طبقے کے لیے ایک حد مقرر کریں گے اور اس کا فائدہ کم آمدنی والے افراد کو پہنچائیں گے۔ پچھلے کچھ عرصے کے دوران عمان سے وینز ویلا تک تیل پیدا کرنے والے ملکوں کو عالمی منڈی میں تیل کی گرتی قیمتوں کے اثرات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ سعودی عرب نے اپنے ہاں پٹرول اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ کرتے ہوئے پانی کے اخراجات کو بھی معقول حد تک لانے کی کوشش کی ہے۔ ریاض حکومت 2020ء تک سالانہ 30 ارب ڈالر سبسڈی کا پروگرام رکھتی ہے۔ یہ پروگرام بھی تیل کے علاوہ 100 ارب ڈالر دوسرے ذرائع آمدنی پر انحصار کا حصہ ہے۔ اسی جانب اشارہ کرتے ہوئے شہزادہ محمد بن سلمان نے کہا کہ کہ شہریوں کو دی جانے والی نقد امداد کھپت میں کمی کا ذریعہ بنیں گی۔

TOPPOPULARRECENT