Saturday , September 22 2018
Home / Top Stories / غزہ تا اسرائیل سرنگ اسرائیلی فوج کے ہاتھوں تباہ

غزہ تا اسرائیل سرنگ اسرائیلی فوج کے ہاتھوں تباہ

حملہ کے مقصد سے سرنگ کھودنے کا اسرائیلی ادعا ‘ وزیراعظم اسرائیل تاریخی دورہ ہند پر روانہ

یروشلم ۔ 14 جنوری ( سیاست ڈاٹ کام ) اسرائیل نے آج کہا کہ اُس نے فضائی حملوں اور دیگر ذرائع کے تعاون سے ایک سرنگ جو غزہ پٹی سے اسرائیل تک کھودی گئی تھی اور جس کا سلسلہ مصر تک پہنچ رہا تھا تباہ کردی ۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان جناتھن کانریکس نے کہا کہ یہ سرنگ فلسطینیوں کی اسلامی تحریک حماس کی ملکیت تھی اور اس کے کھودینے کا مقصد حملہ کے علاوہ اسمگلنگ کا انسداد تھا ۔ ایسی سرنگیں عام طور پر ماضی میں حملے کرنے کیلئے استعمال کی جاتی رہی ہے ۔ ترجمان نے کہا کہ وہ ہلاکتوں کی تعداد سے واقف نہیں ہیں جو سرنگ کی تیاری میں واقع ہوئیں ۔ سرنگ کی تعمیر ہنوز جاری تھی ۔ یہ زیرزمین غزہ پٹی کے ناکہ بندی کے علاقوں سے اسرائیل تک زیر زمین کھودی گئی تھی اور اُس چوراہے کے نیچے سے گذرتی تھی جہاں سے اشیاء کی حمل و نقل ہوتی ہے ۔ یہ چوراہا کارم شالم کہلاتا ہے ۔ یہاں سے گیس اور ایندھن کی پائپ لائن بھی گذرتی ہے ۔ کانریکس کے بموجب اسرائیل کے فوجی حملے ہفتہ کے دن دیر گئے ہوئے ۔ ان کے علاوہ دیگر زمینی ذرائع استعمال کئے گئے تاکہ سرنگ کو تباہ کیا جاسکے ۔ فضائی حملے غزہ پٹی کی سرحد کے اندر تھے ۔ اس کے علاوہ اسرائیلی سرزمین پر دیگر زمینی ذرائع کے تعاون سے کارروائی کی گئی ۔ سرنگ کا آغاز غزہ کے شہر رفاہ سے ہوتا تھا اور اسرائیل تک یہ 180میٹر طویل تھی ۔ اُسے مصر تک کھودا جارہا تھا تاہم اس کی طوالت کا انکشاف نہیں کیا گیا اور نہ باہر نکلنے کا کوئی راستہ دریافت کیا جاسکا ۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان نے کہا کہ اسرائیل نے اس کارروائی میں مصر کا تعاون بھی حاصل کیا تھا ۔ اس سرنگ کی جملہ لمبائی تقریباً دیڑھ کلومیٹر ہے ۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ سرنگ کھودنے کیلئے ایک نیا طریقہ استعمال کیا گیا اور ایسی سرنگوں کی تباہی کیلئے بھی نئی ٹکنالوجی ضروری ہوتی ہے ‘ حالانکہ اس نے تفصیلات کا انکشاف نہیں کیا ۔ ایک زیرزمین دیوار بھی اس علاقہ میں غزہ پٹی کے قریب تعمیر کی جارہی ہے تاکہ آئندہ ایسی سرنگیں نہ کھودی جاسکے ۔ تازہ ترین سرنگ اکٹوبر سے اب تک تباہ کی جانے والی تیسری سرنگ تھی جو اسرائیل تک پہنچتی تھی لیکن خاص طور پر ایک حساس وقت اس سرنگ کو تباہ کیا گیا ہے ۔ جب کہ فلسطینیوں اور اسرائیل کے درمیان کشیدہ تعلقات عروج پر ہیں ۔کیونکہ صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ نے 6 ڈسمبر کو یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کیا ہے ‘ بے چینی میں غزہ پٹی سے اسرائیل پر راکٹ حملے بھی شامل ہیں جن میں سے بیشتر کی جوابی کارروائی کے طور پر اسرائیل فضائی حملے کررہا ہے ۔ فوج کے ترجمان نے آج کہا کہ اسرائیل اپنی خودمختاری کا دفاع کررہا ہے اور سرنگ کی تباہی ایسے اقدامات میں سے ایک تھی ۔ وہ کشیدگی میں اضافہ کرنے کا خواہاں نہیں ہے ۔ دریں اثناء ہندوستان کے ساتھ اپنے دفاعی تعلقات میں استحکام کے مقصد سے وزیراعظم اسرائیل نتن یاہو آج 6روزہ سرکاری دورہ ہند پر اسرائیل سے ہندوستان کیلئے روانہ ہوگئے ۔

TOPPOPULARRECENT