Friday , November 24 2017
Home / عرب دنیا / غزہ جنگ 2014 ء کے بعد اوّلین اسرائیل ۔ حماس جھڑپیں

غزہ جنگ 2014 ء کے بعد اوّلین اسرائیل ۔ حماس جھڑپیں

غزہ سٹی 5 مئی (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیلی فوج اور حماس کے جنگجوؤں کے درمیان تباہ کن جنگ 2014 ء کے بعد پہلی بار راست جھڑپیں ہوئیں۔ اسرائیلی فوج نے آج کہاکہ ایک نئی سرحد پار سرنگ جسے عسکریت پسند استعمال کرتے تھے، دریافت ہوئی ہے۔ فوج کے ترجمان پیٹر لرنر نے کہاکہ گزشتہ 24 گھنٹے کے دوران کم از کم 6 واقعات حماس کی جانب سے آئی ڈی ایف کی سرگرمیوں پر فائرنگ کے ہوچکے ہیں۔ اسرائیلی فوج کے بموجب اسرائیل نے جوابی کارروائی کی۔ یہ اسرائیلی فوجیوں اور حماس جنگجوؤں کے درمیان 2014 ء کی تباہ کن غزہ جنگ کے بعد اوّلین جھڑپیں تھیں۔ فلسطینی جنگجوؤں اور اسرائیلی فوج کے درمیان جھڑپیں رفاہ کے مشرق میں غزہ پٹی میں آج دوپہر بھی جاری تھیں۔ صیانتی ذرائع اور عینی شاہدین کے بموجب اسرائیلی فوج نے دبابوں کے ذریعہ فلسطینی عمارت سے مارٹر فائرنگ کے جواب میں فائرنگ کی۔ اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی معاہدہ کے بارے میں اِن جھڑپوں سے اندیشہ پیدا ہوگیا ہے۔ 50 روزہ جنگ کے بعد جس میں 2251 فلسطینی اور 73 اسرائیلی ہلاک ہوئے تھے،

 

جنگ بندی معاہدہ طے پایا تھا۔ حماس کے مسلح شعبہ عزالدین القاسم بریگیڈ نے اسرائیلی فوج پر الزام عائد کیا ہے کہ اُس نے غزہ کی سرزمین پر ناجائز قبضہ کرلیا ہے اور بریگیڈ جوابی کارروائی کے لئے تیار ہے۔ اسرائیل کے رات بھر فضائی دھاوے غزہ کے 4 مقامات پر جاری رہے جس سے 4 افراد بشمول تین بچے زخمی ہوگئے۔ اسرائیلی فوج کے بموجب حملوں کے اہداف سرحدی علاقہ میں مشتبہ سرنگیں تھیں۔ جیسی کہ 2014 ء کی جنگ میں تباہ کی گئی تھیں۔ فوج نے اعلان کیاکہ آج ایک نئی سرنگ دریافت ہوئی۔ وسط اپریل میں پہلی اپریل دریافت ہوئی تھی۔ اسرائیلی فضائیہ کے طیارہ نے حماس دہشت گردوں کے انفراسٹرکچر کے 4 مقامات پر شمالی غزہ پٹی میں حملے کئے۔ ہلاکتوں کے بارے میں تاحال طبی ذرائع سے کوئی اطلاع نہیں ملی۔ ضلع الزیتون پر حملہ سے ایک ہی خاندان کے 4 افراد جن میں سے 3 بچے اور ایک 65 سالہ شخص تھا، زخمی ہوگئے۔ ایک گیاریج بھی فضائی حملوں کا نشانہ بنا۔ اِس کے مالک حسن حسنین نے کہاکہ زیرمرمت گاڑیاں شعلہ پوش ہوگئیں۔ حالانکہ انھیں فوج استعمال نہیں کرتی تھی بلکہ یہ صرف تعمیر نو کے مقصد سے حاصل کی گئی تھیں۔ لرنر نے کہاکہ آج جو سرنگ دریافت ہوئی تقریباً 30 میٹر گہری ہے۔ تاہم اُنھوں نے سرنگ کی لمبائی ظاہر نہیں کی۔

TOPPOPULARRECENT