Monday , June 25 2018
Home / دنیا / غزہ حملوں کی انکوائری ہو گی: اقوام متحدہ سربراہ

غزہ حملوں کی انکوائری ہو گی: اقوام متحدہ سربراہ

اقوام متحدہ ۔ 23 اکٹوبر۔(سیاست ڈاٹ کام)اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ وہ غزہ کی حالیہ لڑائی میں اقوامِ متحدہ کی سہولتوں پر حملوں کی انکوائری شروع کر رہے ہیں۔انھوں نے کہا کہ آزادانہ تحقیقات سے ان سنجیدہ واقعات کا جائزہ لیا جائے گا جہاں معصوم جانیں ضائع ہوئیں۔انکوائری ان الزامات کا بھی جائزہ لے گی کہ فلسطینی جن

اقوام متحدہ ۔ 23 اکٹوبر۔(سیاست ڈاٹ کام)اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ وہ غزہ کی حالیہ لڑائی میں اقوامِ متحدہ کی سہولتوں پر حملوں کی انکوائری شروع کر رہے ہیں۔انھوں نے کہا کہ آزادانہ تحقیقات سے ان سنجیدہ واقعات کا جائزہ لیا جائے گا جہاں معصوم جانیں ضائع ہوئیں۔انکوائری ان الزامات کا بھی جائزہ لے گی کہ فلسطینی جنگجوؤں نے اقوامِ متحدہ کی سہولتوں کو اسلحہ رکھنے کے لیے استعمال کیا تھا۔اس لڑائی میں تقریباً 2,100 فلسطینی، 67 اسرائیلی فوجی اور چھ عام اسرائیلی شہری ہلاک ہوئے تھے۔اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے فلسطینیوں میں زیادہ تعداد عام شہریوں کی تھی۔ اسرائیل کا الزام ہے کہ عام شہریوں کی زیادہ تعداد میں ہلاکتوں کی وجہ یہ تھی کہ حماس کے جنگجو رہائشی علاقوں سے راکٹ حملے کر رہے تھے، جن میں سکول اور مساجد بھی شامل تھیں

اور وہاں جواباً حملوں میں ہلاکتیں ہوتی تھیں۔اسرائیل نے آٹھ جولائی کو غزہ پر حملہ کیا تھا جس کا مقصد شدت پسندوں کے راکٹ حملوں کو روکنا بتایا جا رہا تھا۔کئی چھوٹی بڑی جنگ بندیوں کے بعد بالآخر 26 اگست کو ایک اور جنگ بندی کا معاہد کیا گیا جو کہ اب تک جاری ہے۔بان کی مون غزہ کے دورے کے بعد منگل کو اقوامِ متحدہ کی سکیورٹی کونسل سے خطاب کر رہے تھے۔ انھوں نے جبالیہ پناہ گزین کیمپ کا بھی دورہ کیا تھا جہاں لڑائی کے دوران عام شہریوں نے پناہ لی تھی۔انھوں نے کہا کہ ’میں امید کرتا ہوں کہ اسرائیلی ڈیفنس فورسز اس اور اس طرح کے دوسرے واقعات کی مکمل تحقیقات کریں گی جہاں اقوامِ متحدہ کی سہولیات کو نشانہ بنایا گیا اور کئی معصوم افراد ہلاک ہوئے۔‘ایک واقع میں اسرائیلی بمباری سے اقوامِ متحدہ کے سکول میں پناہ لینے والے ایک درجن سے زیادہ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔بان کی مون نے کہا کہ سردیوں کی آمد سے پہلے فلسطین کے اس جنگ زدہ علاقے کو امدادی سامان پہنچانا اشد ضروری ہے۔

TOPPOPULARRECENT