Thursday , September 20 2018
Home / سیاسیات / غیرکانگریسی ، غیربی جے پی محاذ کی تحریک میں شدت

غیرکانگریسی ، غیربی جے پی محاذ کی تحریک میں شدت

بی جے پی دشمن محاذ کی تشکیل کیلئے ’’دہلی چلو ‘‘ممتا بنرجی کا نعرہ

پرولیا (مغربی بنگال ) ۔ 5 مارچ ۔(سیاست ڈاٹ کام) علاقائی پارٹیوں کو متحد کرکے تاکہ بی جے پی کا مقابلہ کیا جاسکے چیف منسٹر مغربی بنگال ممتا بنرجی نے آج دہلی چلنے اور لال قلعہ پر دھاوا بولنے کو محاذ کا مقصد قرار دیا ۔ انھوں نے کہاکہ بھگوا پارٹی مغربی بنگال میں کامیابی حاصل کرنے سے قاصر رہے گی ۔ صدر بی جے پی امیت شاہ نے کہا تھاکہ پارٹی میں کامیابی ایک سنہری دور کی نقیب ہے۔ عنقریب مغربی بنگال ، اڈیشہ اور کرناٹک کو حریف پارٹیوں سے چھٹکارہ دلایا جائے گا ۔ ممتا بنرجی نے کہاکہ ہم نیتاجی سبھاش چندربوس کے نعرہ پر یقین کرتے ہیں ’’بنگال کسی کے بھی آگے نہیں جھکے گا ‘‘ ۔ انھوں نے تریپورہ میں بی جے پی کی کامیابی کی اہمیت کم کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی مغربی بنگال اور اڈیشہ میں کبھی کامیاب نہیں ہوسکتی ۔ انھوں نے کہا کہ تریپورہ کا انتخابی نتیجہ سی پی آئی ایم کی جانب سے خودسپردگی اور کانگریس کی اُن کی پارٹی کے ساتھ اتحاد سے انکار کا نتیجہ ہے۔ اُنھوں نے مرکز کی بی جے پی زیرقیادت حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ عوام کے بینک کھاتوں کو اُن کے پیسہ لوٹ رہی ہے اور ان پیسوں کو تریپورہ میں انتخابی کامیابی کیلئے استعمال کیاگیا ہے۔ نئی دہلی سے موصولہ اطلاع کے بموجب اپوزیشن کے تازہ اتحاد کی کوشش اور بی جے پی سے مقابلہ کرنے کیلئے ترنمول کانگریس نے آج کہا کہ صدر پارٹی ممتا بنرجی ڈی ایم کے کے کارگذار صدر ایم کے اسٹالن سے بھی ربط پیدا کرچکی ہیںاور پارلیمنٹ کے باہر دونوں قائدین کی بات چیت ہوئی ۔ راجیہ سبھا رکن ڈیریک اوبرائن نے کہا کہ ہم اتحاد کے درست راستے پر ہیں۔ انھوں نے کہاکہ ٹی آر ایس ، ٹی ڈی پی ، ایس پی ، بی ایس پی ، ٹی ایم سی اور ڈی ایم کے کے درمیان پارلیمنٹ میں اچھی ہم آہنگی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT