Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / غیر مجاز ہورڈنگس اور بیانرس کیخلاف مہم میں شدت

غیر مجاز ہورڈنگس اور بیانرس کیخلاف مہم میں شدت

وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی راما راؤ کی ہدایت پر جی ایچ ایم سی کی کارروائی کا آغاز‘ عہدیداروں کو ہدایات
حیدرآباد۔21جنوری(سیاست نیوز) مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد نے شہر میں دوبارہ غیر مجاز ہورڈنگس اور بیانرس کے خلاف مہم شروع کی ہے اور انہیں نکالنے کی تمام زون کے عہدیداروں کو ہدایت جاری کی گئی ہیں۔ بتایاجاتا ہے کہ ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق مسٹر کے ٹی راما راؤ کی ہدایت کے بعد عہدیداروں نے حرکت میں آتے ہوئے بڑے پیمانے پر کاروائی کا آغاز کیا ہے اور اس سلسلہ میںماتحتین کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ تمام بلدی زونس میں بیانر اور ہورڈنگس نکالنے کے عمل کی مکمل ویڈیو گرافی و تصویر کشی کریں تاکہ دوبارہ لگائے جانے پر سخت کاروائی کی جاسکے۔ بلدی عہدیداروں کا کہناہے کہ شہر میں غیر مجاز ہورڈنگس اور بیانرس کے سلسلہ میں کی جانے والی کاروائی کے دوران سیاسی جماعتوں کے بیانرس اور ہورڈنگس کو بھی نکالا جائے گا لیکن ان کے اس قول اور عملی اقدامات کا جائزہ لیا جائے تو شہر کے بیشتر مقامات پر سیاسی جماعتوں کے قائدین کی تصاویر کے بیانرس نظر آرہے ہیں اور ان بیانرس اور ہورڈنگس کے نکالے جانے کے باوجود دوبارہ انہیں نصب کیا جانا معمول بن چکا ہے۔ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد میں اہم مقامات پر ہورڈنگس اور بیانرس کی تنصیب کے سلسلہ میں خود سیاسی قائدین سرگرم ہیں اور ان سیاسی کارکنوں کی جانب سے اپنے قائدین ‘ ارکان اسمبلی‘ ارکان پارلیمان اور وزراء کو خوش کرنے کے لئے ایسے سینکڑوں بیانرس لگائے جارہے ہیں لیکن ان کے خلاف کوئی عملی کاروائی نہیں دیکھی جا رہی ہے ۔ چند یوم قبل حلقہ اسمبلی ملک پیٹ میں معذورین کیلئے خصوصی پارک کے افتتاح کے موقع پر ریاستی وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی راما راؤ کی توجہ دہانی اور ہدایت کے بعد حلقہ اسمبلی ملک پیٹ کے 2 صکارپوریٹرس کو چالان کیا گیا لیکن اس کے باوجود بھی بیانرس اور ہورڈنگس کی تنصیب کے عمل میں کوئی کمی واقع نہیں ہوئی ہے۔کمشنر مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد ڈاکٹر بی جناردھن ریڈی نے اس سلسلہ میں احکام جاری کرتے ہوئے تمام زونل کمشنرس کو ہدایت دی ہے کہ وہ بیانرس اور غیر مجاز ہورڈنگس ہٹانے کے لئے محکمہ پولیس کی مدد حاصل کریں ۔ بتایاجاتا ہے کہ گذشتہ ایک ہفتہ کے دوران بلدی حدود میں 333 ہورڈنگس اور بیانرس ہٹائے جا چکے ہیںا وران کی جگہ دوبارہ بیانرس یا ہورڈنگس کی تنصیب کے سلسلہ میں سخت کاروائی کا انتباہ دیا گیا ہے ۔ دونوں شہرو ںمیں کی جانے والی اس کاروائی کے اثرات پرانے شہر کے علاقوں میں نہیں دیکھے جا رہے ہیں اور نئے شہر کے سیاسی قائدین پرانے شہر میں کاروائی نہ کئے جانے پر اعتراض کرنے لگے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT