Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / غیر معیاری پلاسٹک کے استعمال سے ماحولیاتی آلودگی میں اضافہ

غیر معیاری پلاسٹک کے استعمال سے ماحولیاتی آلودگی میں اضافہ

حکومت تلنگانہ کی جانب سے فلیکس کے پلاسٹک استعمال پر امتناع ، نیشنل گرین ٹریبونل سفارشات پر عمل
حیدرآباد۔11جولائی (سیاست نیوز) حکومت تلنگانہ نے غیر معیاری اور متعدد مرتبہ استعمال کئے جانے والے فلیکس کے پلاسٹک اور غیر معیاری پی وی سی پر مکمل امتناع کا فیصلہ کیا ہے اور اس امتناع کی بنیادی وجہ نیشنل گرین ٹریبونل کی سفارشات سمجھی جا رہی ہیں جس میں ریاستی حکومت کو ماحولیات کے تحفظ کیلئے احکام جاری کرتے ہوئے متعدد سفارشات روانہ کی گئی ہیں اور کہا جا رہا ہے کہ ریاست میں غیر معیاری فلیکس اور ہورڈنگس کے استعمال کے ساتھ غیر معیاری پلاسٹک کا استعمال ماحولیاتی آلودگی میں کلیدی کردار ادا کر رہا ہے کیونکہ یہ پلاسٹک جلد تلف نہیں ہوتا اسی لئے اس پلاسٹک کے سبب جو صورتحال پیدا ہوتی ہے اس سے نہ صرف گھٹن کا احساس ہوتا ہے بلکہ جب یہ پلاسٹک زمین پر پھینک دیا جاتا ہے تب بھی وہ تلف نہیں ہوتا اور ان حالات میں اراضیاتی آلودگی بھی شروع ہوجاتی ہے جو ارضیات کے لئے نقصاندہ ثابت ہوتی ہے۔ عہدیداروں کا کہنا ہے کہ اکثر غیر معیاری پلاسٹک اور فیلکس کیلئے استعمال کیا جانے والا پلاسٹک از سرنو استعمال کے لئے جلایا جاتا ہے جس کے سبب آلودگی پیدا ہوتی ہے لیکن جب یہ پلاسٹک بلکلیہ طور پر ناقابل استعمال ہوجاتا ہے تو ایسی صورت میں اس پلاسٹک کو تلف کرنا نا ممکن ہوتا ہے اسی لئے حکومت نے 14مائیکرون سے کم کے پلاسٹک کے استعمال پر پابندی عائد کر رکھی ہے لیکن اس پابندی کے باوجود شہر میں فلیکس کی تیاری کیلئے وہ مٹیرئیل استعمال کیا جانے لگا ہے ۔ محکمہ ماحولیات کے عہدیداروں نے اس بات کا اعتراف کیا کہ ریاست میں اس امتناع کے بعد فلیکس بیانرس کی تیاری کی صنعت پر بھاری اثر بڑے گا ۔ فلیکس بنانے والی صنعت سے وابستہ افراد کا کہنا ہے کہ ریاستی حکومت کے ان احکامات سے فیلکس سازی صنعت تو متاثر ہوگی ہی لیکن اس کے ساتھ پلاسٹک صنعت کو بھی بھاری نقصان برداشت کرنا پڑ سکتا ہے ۔ صنعت کاروں کا کہنا ہے کہ حکومت کو فوری امتناع عائد کرنے کے بجائے ان اشیاء کی تیاری کیلئے فروخت کیا جانے والی خام اشیاء کی فروخت کو ہی ناممکن بنانے کے اقدامات کرنے چاہئے کیونکہ ان خام اشیاء کی فروخت پر امتناع کی صورت میں فلیکس اور غیر معیاری پی وی سی ہی بند ہو جائے گا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT