Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / فرضی پاسپورٹ تیار کرنے والے ایڈوکیٹ اور قاضی گرفتار

فرضی پاسپورٹ تیار کرنے والے ایڈوکیٹ اور قاضی گرفتار

ایوب خاں کے خلاف مقدمہ کی تحقیقات میں پیشرفت ، دوبئی سے سونے کی اسمگلنگ
حیدرآباد۔/17جنوری، ( سیاست نیوز) خطرناک روڈی شیٹر ایوب خان کے فرضی پاسپورٹ کیس کی تحقیقات شدت سے جاری ہیں اور ساؤتھ زون پولیس نے پیشرفت کرتے ہوئے چار ملزمین بشمول ایک ایڈوکیٹ اور قاضی کو گرفتار کرلیا۔ ڈپٹی کمشنر پولیس ساؤتھ زون مسٹر وی ستیہ نارائنا نے بتایا کہ جاریہ سال ممبئی ایرپورٹ پر گرفتار کئے جانے کے بعد ایوب خان کو حیدرآباد منتقل کرتے ہوئے کاماٹی پورہ پولیس نے فرضی پاسپورٹ حاصل کرنے پر اس کے خلاف ایک مقدمہ درج کیا تھا اور اس سلسلہ میں پولیس نے اسے سات دن کی پولیس تحویل میں لیا تھا۔ تفتیش کے دوران ایوب خان نے انکشاف کیا کہ چرلہ پلی جیل میں مسلم قیدیوں اور جیل حکام کے درمیان جھگڑے کے بعد اہم قیدیوں کو وشاکھاپٹنم جیل منتقل کردیا گیا تھا جس میں ایوب خان بھی شامل تھا۔ روڈی شیٹر کی بیوی حفیظہ بیگم اور اس کے دیگر افراد خاندان وشاکھاپٹنم عارضی طور پر منتقل ہوگئے اور اس کی بیوی اکثر جیل میں اس سے ملاقات کیا کرتی تھی جہاں پر  جہاں پر اس نے فرضی پاسپورٹ تیار کرنے کا منصوبہ تیار کیا۔ روڈی شیٹر کے برادر نسبتی محمد قیصر الدین نے ایک مقامی پاسپورٹ ایجنٹ محمد خلیل احمد ساکن ریڈ ہلز سے رابطہ قائم کیا اور اس کی ایماء پر شاد نگر سے تعلق رکھنے والے قاضی سید مقتدر علی اور نائب قاضی محمد نصیر الدین ساکن کالا پتھر کی مدد سے فرضی نکاح نامہ حاصل کیا۔ پاسپورٹ ایجنٹ نے نوٹری ایڈوکیٹ پی رویندر ناتھ کی مدد سے فرضی دستاویزات کی نوٹری کروائی اور پاسپورٹ اجراء کرنے والے عہدیدار وینکٹ کی مدد سے فرضی پاسپورٹ تیار کروایا۔ ایوب خان کی بیوی حفیظہ بیگم کو بھی فرضی پاسپورٹ کیس میں ملزم بنایا گیا ہے۔ ایڈوکیٹ منان غوری قتل کیس میں ہائی کورٹ سے برأت کے بعد ایوب خان سال 2014 میں وشاکھاپٹنم جیل سے رہا ہوگیا اور بعد ازاں اپنے بیٹے کے ہمراہ متحدہ عرب امارات فرار ہوگیا جہاں پر اس نے 40 ہزار درہم سالانہ پر مکان کرایہ پر حاصل کیا۔ بعد ازاں دبئی میں اپنے ایک اور برادر نسبتی بدر اور بھانجہ اسحاق کی مدد سے بڑے پیمانے پر سونے کی اسمگلنگ میں ملوث ہوگیا اور دبئی سے پاسنجرس کے ہمراہ ایک کیلو سونا روانہ کیا کرتا تھا جس کے عوض پاسنجر کو 25ہزار روپئے دیا کرتا تھا۔ روڈی شیٹر نے سونے کی اسمگلنگ کیلئے اپنے بھانجہ اسحاق کو 20 لاکھ روپئے دیئے تھے اور ہر ماہ وہ 75 ہزار تا ایک لاکھ روپئے کا منافع دیا کرتا تھا۔ سیول  تنازعات کے تصفیہ میں ملوث ہونے پر عابڈز اور بھوانی نگر پولیس اسٹیشن میں بھی دو مقدمات درج کئے گئے ہیں۔ پاسپورٹ کے حصول کیلئے فرضی شناختی کارڈ تیار کرنے والے محمد جعفر کی پولیس کو تلاش ہے۔

TOPPOPULARRECENT