Monday , June 25 2018
Home / اضلاع کی خبریں / فرقہ پرستوں کو اقتدار سے دُور رکھنے مسلمانوں کو متحد ہونا ضروری

فرقہ پرستوں کو اقتدار سے دُور رکھنے مسلمانوں کو متحد ہونا ضروری

کریم نگر ۔ 7 اپریل (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ہمارا ملک ہندوستان ایک عظیم جمہوری ملک ہے، یہاں ہر مذہب، ذات اور طبقات کو ہر طرح کی مذہبی آزادی اور مساویانہ حقوق حاصل ہیں۔ ہندوستان میں مسلمانوں کو اپنے مذہبی رسم و رواج کے مطابق شادی بیاہ اور مذہبی رسوم کی ادائیگی ہی نہیں بلکہ زندگی کے اہم معاملات میں اسلامی قانون پر عمل کرنے کی آزادی حاصل ہے۔

کریم نگر ۔ 7 اپریل (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ہمارا ملک ہندوستان ایک عظیم جمہوری ملک ہے، یہاں ہر مذہب، ذات اور طبقات کو ہر طرح کی مذہبی آزادی اور مساویانہ حقوق حاصل ہیں۔ ہندوستان میں مسلمانوں کو اپنے مذہبی رسم و رواج کے مطابق شادی بیاہ اور مذہبی رسوم کی ادائیگی ہی نہیں بلکہ زندگی کے اہم معاملات میں اسلامی قانون پر عمل کرنے کی آزادی حاصل ہے۔ یہاں کی عدالتوں میں بھی اس کا لحاظ رکھا جاتا ہے۔ موروثی جائیداد کی تقسیم ہو کہ شادی بیاہ یا طلاق کا مسئلہ ہو، ہر معاملے میں اسلامی قانون کا پاس و لحاظ رکھا جاتا ہے۔ یہ ہماری خوش نصیبی ہے کہ ہم ہندوستانی ہیں چنانچہ اس کی ترقی اور یہاں کی تہذیب کی بقاء کیلئے کوشش کرنا ہماری ذمہ داری ہے۔ آج ہندوستان کو سب سے بڑا چیلنج کسی دوسرے ملک کی فوجی طاقت سے نہیں بلکہ فرقہ پرست جماعتوں سے ہے اور کچھ حد تک اپنے آپ کو سیکولر ہونے کا دعویٰ کرنے والی کانگریس پارٹی کی مجہول پالیسی سے ہے۔ ایسے حالات میں مسلمانوں کو کلمہ کی بنیاد پر متحد ہونے ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار ذمہ داران بہبود کمیٹی نے کریم نگر میں ملت اسلامیہ سے متعلق منعقدہ خصوصی اجلاس کو مخاطب کرتے ہوئے کیا۔ کمیٹی کے ذمہ داران نے کہا کہ ہمیں جذبات میں ایک دوسرے کے مسلک کی تضحیک کے بجائے ایک دوسرے کے قریب ہونے کی ضرورت ہے۔ علمائے کرام سے ادباً گزارش ہے کہ مساجد کے منبر سے مسلمانوں میں متحد پیدا کرنے کی بات کریں۔ آنے والے انتخابات میں اگر مسلم ووٹس تقسیم ہوجائیں تو اس کا تمام فائدہ بی جے پی کو ہوگا۔ حقیقت میں کانگریس ہی ایک ایسی سیاسی پارٹی ہے جو فرقہ پرست سیاسی پارٹیوں سے مقابلہ کرسکتی ہے۔ مسلمانوں کی مختلف انجمنیں یا جماعتیں اتنی مضبوط نہیں ہیں کہ وہ اپنے بل بوتے پر سارے تلنگانہ میں اپنے امیدواروں کو اُتاریں اور ان کو کامیاب کرواسکیں چنانچہ مسلم جماعتوں کو عام انتخابات کے سلسلے میں متفقہ طور پر غوروخوض کرنا چاہئے اور ایک لائحہ عمل مرتب کرنا چاہئے۔ اس سلسلے میں ایک مشاورتی اجلاس بلاکسی مسلکی یا جماعتی وابستگی کے بغیر منعقد کیا جائے جس میں مسلمانوں کے دانشور حضرات ایک لائحہ عمل اور حکمت عملی تیار کریں کہ تلنگانہ میں جو پارٹی برسراقتدار آئے گی، وہ مسلمانوں کے مسائل کے حل کیلئے کہاں تک سنجیدہ ہے، اس پر غوروفکر کرکے سیاسی پارٹیوں سے شرائط پر مبنی تحریری معاہدہ کریں۔ اس کے بعد ہی اپنا حق رائے دہی استعمال کریں۔ سبھی مسلم ووٹرس صرف اپنے ذاتی مفاد یا امیدواروں سے قریبی تعلقات کی بنیاد پر ووٹ نہ دیں بلکہ ملت اسلامیہ کے حق میں کونسا امیدوار بہتر ہوگا، اور کون شفاف کردار کا حامل ہے، اسے ہی ووٹ دیں۔ گزشتہ پچاس برسوں سے مسلمانوں نے بہت کچھ کھویا ہے، اسی لئے کافی غوروخوض کے بعد ہی ووٹ دینا کا فیصلہ کریں۔ اس اجلاس میں سید محی الدین صدر ضلع مسلم بہبود کمیٹی ، سکریٹری موظف سپرنٹنڈنٹ انجینئر ، نائب صدر مفتی محمد ندیم الدین صدیقی صدر کل ہند ائمہ ترجمان اہل سنت و جماعت ، سکریٹری ریاض علی رضوی صدر حج سوسائٹی کریم نگر ، صدر قاضی حافظ احمد منقبت شاہ ، سید ضمیر الدین احمد ، سید منصور توکلی ، سید امام الدین، محمد عبداللہ اسد ، سید مخدوم علی ، حافظ فصیح الدین خالد ، سید عرفان اللہ حق ، عبدالرشید لطیفی اور دیگر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT