Saturday , July 21 2018
Home / ہندوستان / فرقہ پرستی کو نہیں روکا گیا تو یہ ملک کیلئے تباہ کن ہوگا: شریش کھیرنار

فرقہ پرستی کو نہیں روکا گیا تو یہ ملک کیلئے تباہ کن ہوگا: شریش کھیرنار

پٹنہ۔10 اپریل(سیاست ڈاٹ کام) ملک میں بڑھتی ہوئی فرقہ پرستی اور نفرت کے ماحول پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مشہور سماجی کارکن شریش کھیرنار نے کہاکہ اگر اس وقت ملک میں فرقہ پرستی کو نہیں روکا گیا تو یہ ملک کیلئے تباہ کن ثابت ہوگی۔ یہ بات انہوں نے چمپارن ستیہ گرہ تحریک کے اختتامی پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔انہوں نے کہاکہ ملک کے سماجی تانا بانا کو تباہ اور بھائی چارے کے ماحول بگاڑنے کی کوشش کی جارہی ہے اور ملک کا ایک بڑا طبقہ خاموش تماشائی بنا ہوا ہے ۔انہوں نے کہاکہ اس کے خلاف ملک کے عوام کو آگے آنا چاہئے کیوں کہ گنگا جمنی تہذیب اور ثقافتی اور مذہبی تنوع ہی اس ملک کی پہنچان اور طاقت ہے جسے کچھ شرپسند لوگ تباہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔انہوں نے بہار کو تحریک کی سر زمین قرار دیتے ہوئے امید ظاہر کی کہ یہیں سے ملک کو رہبری ملے گی۔ دہلی یونیورسٹی کے پروفیسر اپوروآنند نے دعوی کیا کہ مسلمانوں کی آبادی کے ارد گرد ایک گھیرا تنگ کیا جارہا ہے اور یہ ناپاک کوشش کی جارہی ہے مسلمان اس پر کوئی ردعمل ظاہر نہ کریں اوراپنے آپ کو دوم درجے کا شہری تسلیم کرلیں۔ انہوں نے بھی ملک میں فرقہ وارانہ ماحول کی اشارہ کرتے ہوئے کہاکہ اس ملک ترقی کی طرف سے نہیں تنزلی کی طرف جائے گا ۔انہوں نے سول سوسائٹی سے اس سنگینی کو سمجھنے کی اپیل کی۔سماجی کارکن اور سابق رکن اسمبلی ڈاکٹر سیلم نے کہاکہ ملک میں عدم اعتماد کا ماحول ہے اور انہوں نے دعوی کیا کہ حکومت کی بات پرکم ہی لوگ یقین کرتے ہیں۔ اب تک ایسا نہیں ہوا تھا کہ حکومت پر اعتماد نہ ہو یا اس کے اعلانات پر یقین نہ کرتے ہوں لیکن موجودہ حکومت کے بارے میں یہ بات کہی جاسکتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT