Wednesday , September 26 2018
Home / Top Stories / فلپائن میں طوفان سے مرنے والوں کی تعداد180،سینکڑوں لاپتہ

فلپائن میں طوفان سے مرنے والوں کی تعداد180،سینکڑوں لاپتہ

LANAO, DEC 24:- Logs swept by flashfloods lie in a village in Salvador, Lanao del Norte in southern Philippines, December 24, 2017. REUTERS-19R

منیلا ،24ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام)فلپائن میں طوفان ٹیمبن نے تباہی مچادی،سیلاب اور مٹی کے تودے گرنے کے باعث180 افرادہلاک اور متعددلاپتہ ہوگئے ۔حکام کا کہنا ہے کہ طوفان ٹیمبن گزشتہ روزفلپائن کے جزیرے منڈاناو سے ٹکرایا، جس کے باعث درجنوں افراد ہلاک اور کئی لاپتہ ہوگئے ، طوفان سے شدیدبارشیں،سیلاب،مٹی کے تودے گرنے کے واقعات ہوئے جن کے باعث ہلاکتوں میں اضافہ ہوا۔فلپائن میں حکام نے بتایا ہے کہ ملک کے جنوبی حصے میں آنے والے طوفان کے نتیجے میں 180 سے زیادہ افراد ہلاک جبکہ درجنوں افراد ابھی بھی لاپتہ ہیں۔فلپائن میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے کا کہنا ہے کہ ٹیمین نامی طوفان جزیرہ منڈاناؤ کے حصوں میں اپنے ساتھ سیلاب اور مٹی کے تودے لایا جس کی وجہ سے دو علاقے ، ٹوبوڈ اور پیاگاپو، بری طرح متاثر ہوئے ہیں جہاں کئی گھر مٹی کے تودے تلے دب گئے ہیں۔شدید بارشوں کے بعد بجلی کی معطلی اور مواصلاتی نظام کو نقصان پہنچنے کی وجہ سے ریسکیو کی کوششوں میں مشکلات درپیش آرہی ہیں۔محکمہ موسمیات کے مطابق 80 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے والی ہواؤں کے ساتھ سمندری طوفان ٹیمبن جزیرہ منڈاناؤ سے گزر کر اب جنوب میں پلاوان کی طرف بڑھ رہا ہے جہاں سے وہ تین روز میں مغرب میں جنوبی ویتنام پہنچے گا۔جمعہ کو منڈاناؤ کے بعض حصوں سمیت دو دیگر علاقوں میں ایمرجنسی کی صورتحال کا اعلان کردیا گیا تھا۔واضح رہے کہ فلپائن میں اکثر و بیشتر شدید سمندری طوفان آتے رہتے ہیں البتہ منڈاناؤ اکثر ان سے متاثر نہیں ہوتا۔مقامی عہدیداروںکے حوالے سے آن لائن نیوز ویب سائٹ ریپلر نے لکھا ہے کہ صرف لناؤ ڈل میں 127 ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ زیمبوآگاہ میں 50سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ۔ لناؤ ڈیسر میں ہلاکتوں کی تعداد کم ازکم 18 بتائی گئی ہے ۔توبود کے پولیس افسر گیری پرامی نے خبر رساں ادارہ اے ایف پی کو بتایا کہ اب تک قصبہ میں 19 ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ دلامہ نامی گاؤں طوفان میں بہہ گیا ہے ۔انھوں نے کہا کہ ‘دریا کا پانی بلند ہوا اور بہت سے گھر بہا لے گیا۔ اب وہاں کوئی گاؤں نہیں بچا۔’بجلی کی ترسیل بند ہونے اور مواصلاتی نظام متاثر ہونے کی وجہ سے امدادی سرگرمیاں مشکلات کا شکار ہیں۔منڈاناؤ میں اقوام متحدہ کے ادارہ برائے اطفال یونیسیف کے سربراہ اینڈریو مورس نے کہا ہے کہ بہت سے ایسے علاقے ہیں جہاں بیماریاں پھیلنے کے امکانات ہیں خاص طور پر بچوں میں۔ وہاں بینے کے صاف پانی کی سپلائی ترجیح ہو گی۔’ایک ہفتے پہلے ہی کائی تیک نامی سمندری طوفان نے مرکزی فلپائن کوشدید متاثر کیا تھا جس میں درجنوں افراد ہلاک ہوگئے تھے ۔یہ خطہ ابھی تک 2013 میں آنے والے ہائیان نامی طوفان کی تباہ کاریوں سے بحال ہونے کی کوششوں میں ہے جس میں پانچ ہزار سے زیادہ افراد ہلاک اور کئی ہزار متاثر ہوئے تھے ۔

TOPPOPULARRECENT