Saturday , November 18 2017
Home / دنیا / فوجیوں کے ہتھیار اور آتشیں مادوں کے ذخائر کی جانچ پڑتال کے احکام

فوجیوں کے ہتھیار اور آتشیں مادوں کے ذخائر کی جانچ پڑتال کے احکام

نیوکلیر اور بائیولوجیکل طریقہ جنگ کے ماہرین کی خدمات، سوڈیم سائنائڈ کے ذخائر کی صفائی، 65 افراد ہنوز لاپتہ

بیجنگ 20 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) چین کی افواج نے فوجیوں کے زیراستعمال رہنے والے ہتھیاروں اور دیگر آتشیں مادوں کا ذخائر کی انتہائی تفصیلی جانچ پڑتال کا حکم دیا ہے۔ یاد رہے کہ گزشتہ ہفتہ تیانجن کے ایک کیمیائی گودام میں آگ لگنے اور دھماکہ کے دلدوز وائقعہ کے بعد یہ ہدایت جاری کی گئی ہے۔ دھماکہ میں 114 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ پی ایل اے کے چار ہیڈکوارٹرس جنرل اسٹاف ہیڈ کوارٹرس، جنرل پولٹیکل ڈپارٹمنٹ، جنرل لاجسٹکس ڈپارٹمنٹ اور جنرل آرمامنٹ ڈپارٹمنٹ کو مشترکہ سرکلر جاری کیا گیا ہے۔ پیوپلز لبریشن آرمی (پی ایل اے) کی جانب سے جاری کئے گئے ایک بیان میں یہ وضاحت کی گئی جس سے قبل چاروں ہیڈ کوارٹرس کے حکام کا ایک انتہائی اہم اجلاس منعقد ہوا تھا تاکہ حفاظتی جانچ پڑتال کے بارے میں کوئی مشترکہ فیصلہ کیا جاسکے۔ فوج اور مسلح فوج کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنے ہتھیاروں اور دیگر آتشیں اسلحہ جات کی تفصیلی جانچ پڑتال کریں۔

کیمیائی مادے، زہریلے مادے اور دھماکو اشیاء گوداموں میں رکھی جاتی ہیں جن کی جانچ پڑتال اب ناگزیر ہوگئی ہے تاکہ تیانجن جیسے دلدوز واقعہ کا اعادہ نہ ہوسکے۔ تیانجن میں ہوئے دوہرے دھماکوں سے آس پاس کا کئی کیلو میٹر تک کا علاقہ شدید طور پر متاثر ہوا ہے جن میں کئی فلک بوس عمارتیں بھی شامل ہیں جسے اب تک چین کا بدترین صنعتی حادثہ تصور کیا جارہا ہے۔ 114 افراد کی ہلاکت کے علاوہ 65 افراد ہنوز لاپتہ ہیں جبکہ 670 افراد کا مختلف ہاسپٹلس میں علاج کیا جارہا ہے۔ اب تک دھماکوں کی وجوہات کا پتہ نہیں چلا ہے تاہم حکام اب ایک دیگر عمارت سے 3000 ٹن کیمیائی مادے جس میں 700 ٹن انتہائی زہریلا مادہ سوڈیم سائنائیڈ بھی شامل ہے، کی صفائی کے لئے کمربستہ ہوچکے ہیں اور اس عمارت کو کیمیائی مادوں سے پاک کردینا چاہتے ہیں اور اس صفائی کے لئے نیوکلیر اور بائیولوجیکل طریقہ جنگ سے واقف اور تربیت یافتہ 500 فوجیوں کو ذمہ داری سونپی گئی ہے۔ دوسری طرف عوام میں یہ خوف بھی پایا جارہا ہے کہ زہریلی گیاس اور مادّے فضاء میں بکھر کر ماحولیات کو آلودہ کرنے کے علاوہ انسانی زندگیوں کے لئے بھی خطرہ بن سکتے ہیں۔ صفائی کے عمل کی نگرانی کے لئے اعلیٰ سطحی عہدیدار بھی اُس مقام پر موجود رہیں گے تاکہ کوئی مسئلہ پیدا ہونے پر اس کی عاجلانہ یکسوئی کی جاسکے۔ دریں اثناء فوج نے ایک مطالبہ کیا ہے کہ ہنگامی حالات سے نمٹنے مختلف ڈرمس (مشقوں) کے طریقہ کار میں تبدیلی کرتے ہوئے اُن میں بہتری پیدا کی جائے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہے کہ ہر ملک کے فوجی ساز و سامان کے لئے بڑے بڑے گودام مختص کئے جاتے ہیں جہاں ہتھیاروں کے علاوہ دیگر آتشیں اسلحہ جات کا ذخیرہ رکھا جاتا ہے اور وہاں تحفظ کے انتظامات انتہائی اعلیٰ پیمانے کے ہوتے ہیں کیوں کہ ذرا سی غفلت تیانجن جیسے ہلاکت انگیز حادثہ کی وجہ بن جاتی ہے۔

ہندوستانی نژاد امریکی کو پولیس سربراہ کا عہدہ
نیویارک 20 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) ایک سینئر ہندوستانی نژاد امریکی پولیس آفیسر کو کیلیفورنیا کے ایک قلیل آبادی والے شہر کا پولیس سربراہ مقرر کیا گیا ہے۔ اُن کی تقرری کے لئے چھ دیگر امیدواروں میں سے متفقہ طور پر منجیت سیال کا انتخاب عمل میں آیا جو مارٹینیز سٹی پولیس سربراہ کی حیثیت سے 31 اگسٹ کو جائزہ حاصل کریں گے۔ مارٹینیز سٹی کونسل نے کل شب اُن کی تقرری کو قطعیت دی۔ منجیت سپال گیری پیٹرسن کی جگہ لیں جو ایک سال قبل سبکدوش ہوئے تھے۔ سپال رچمنڈ ڈپارٹمنٹ سے 1997 ء میں رجوع ہوئے تھے۔ مارٹینیز سٹی کی آبادی 37000 نفوس پر مشتمل ہے۔

TOPPOPULARRECENT