Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / فوجی علاقہ میں غیر متعلقہ شخص کے داخلہ کی گنجائش نہیں

فوجی علاقہ میں غیر متعلقہ شخص کے داخلہ کی گنجائش نہیں

دو فوجیوں کے مابین فون پر مسلسل بات چیت‘ طالب علم شیخ مصطفیٰ قتل کیس میںپولیس کی اضافی چارج شیٹ

دو فوجیوں کے مابین فون پر مسلسل بات چیت‘ طالب علم شیخ مصطفیٰ قتل کیس میںپولیس کی اضافی چارج شیٹ
حیدرآباد ۔ 2 ۔ مارچ (سیاست نیوز) مدرسہ کے کم عمر طالب علم شیخ مصطفیٰ الدین قتل کیس میں کمشنر حیدرآباد نے ہائی کورٹ میں اضافی حلف نامہ داخل کیا۔ کمشنر نے عدالت کو یہ واقف کرایا کہ تحقیقات کے دوران یہ پتہ لگا ہے کہ مہدی پٹنم گیریژن ملٹری علاقہ میں کسی بھی مشتبہ شخص کے داخلہ کی گنجائش نہیں ہے کیونکہ گیریسن انتہائی سخت سیکوریٹی کا علاقہ ہے۔ انہوں نے بتایا کہ قتل کیس کی تحقیقات کے دوران کئی افراد کے موبائیل فونس کے کال تفصیلات اور ٹاور لوکیشن حاصل کئے گئے جس میں دو فوجیوں لانس نائک ، پی اپلا راجو اور سپاہی بالا نرسمہلو کے درمیان مسلسل گفتگو کا انکشاف ہوا ہے ۔ اپلا راجو نے تفتیش کے بعد خود کو گولی مارکر خودکشی کرلی جبکہ نرسمہلو کو قتل کیس کی تحقیقات کر رہی اسپیشل انویسٹی گیشن ٹیم نے 20 اور 25 اکتوبر کو نوٹس جاری کی اور تحقیقاتی ایجنسی کے روبرو حاضر ہونے کی ہدایت دی گئی لیکن وہ اعصابی عارضہ جس کا تعلق دماغ سے بتایا جاتا ہے، کا شکار ہوگیا ہے اور اسے دواخانہ میں شریک کیا گیا تھا۔ بعد ازاں 6 نومبر کو اسے ڈسچارج کیا گیا تھا۔ کمشنر نے عدالت کو یہ واقف کرایا کہ بعض گواہوں کے بیانات کے بموجب پولیس کو یہ معلوم ہوا ہے کہ نرسمہلواکثر علاقہ کے کم عمر بچوں کی پٹائی کیا کرتا تھا اور وہ اکثر صدیق نگر کے ساکن افراد سے سختی سے پیش آیا کرتا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس کے پاس کئی ایسے شواہد ہے جس سے مصطفیٰ الدین کے قتل کے دن اس کی مقام واردات پر موجودگی کو ثابت کیا جاسکتا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ اس کیس میں ہنوز تحقیقات جاری ہے اور عدالت کو تحقیقات کی پیشرفت سے واقف کرایا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT