فوج اور حکومت میں مکمل ہم آہنگی، طالبان کارروائیوں سے مذاکرات کو دھکا

ترکی سے پاکستان واپسی کے دوران وزیراعظم نواز شریف کی پریس کانفرنس

ترکی سے پاکستان واپسی کے دوران وزیراعظم نواز شریف کی پریس کانفرنس
وزیراعظم پاکستان کے طیارے سے۔ 16؍فروری (سیاست ڈاٹ کام)۔ وزیراعظم پاکستان نواز شریف نے اعتراف کیا ہے کہ طالبان کی حالیہ کارروائیوں سے مذاکرات کو دھکا لگا ہے، تاہم حکومت طالبان کی کارروائیوں کے باوجود نیک نیتی سے مذاکرات جاری رکھے گی ،طالبان بھی اسی جذبے کا مظاہرہ کریں۔ بات چیت کے دوران دہشت گردی بند ہونی چاہئے،طالبان کے ساتھ مذاکرات پرحکومت اورفوج کے درمیان مکمل ہم آہنگی پائی جاتی ہے، اس حوالے سے اختلاف کی خبریں بے بنیادہیں،مذاکراتی عمل شروع ہونے سے قبل طالبان نے دہشت گردی کی کارروائیاں ترک کرنے اوراس میں ملوث افراد کو روکنے کی یقین دہانی کرائی تھی،ایک انسان کا قتل پوری انسانیت کا قتل ہے ،بات چیت کے ذریعے اگرمعصوم جانیں ضائع ہونے سے بچ جائیں تویہ بڑی کامیابی ہوگی،حکومت ملک میں امن وامان کے قیام کے لئے مذاکرات سمیت ہر طریقہ استعمال کررہی ہے۔

صورتِ حال کا جائزہ لے کر آئندہ کا لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔ ماضی میں اپنائی ہوئی غلط پالیسیوں کو اگردرست کرلیا جائے توملک بے پناہ ترقی کرسکتاہے۔ ہفتہ کو ترکی کے شہر استنبول سے اسلام آباد واپسی کے دوران اپنے خصوصی طیارے میں صحافت کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے وزیراعظم پاکستان نواز شریف نے کہاکہ طالبان کے ساتھ مذاکرات سے قبل تمام سیاسی جماعتوں کے قائدین اورعسکری قیادت کو اعتماد میں لیاگیاتھا اس لییطالبان کے ساتھ مذاکرات پر انتظامیہ اورحکومت کے درمیان اختلاف رائے کی خبریں بے بنیاد ہیں۔ توقع ہے کہ طالبان کی جانب سے بھی نیک نیتی کا مظاہرہ کیا جائیگا،وزیراعظم نے کہاکہ بدقسمتی سے گزشتہ دوتین دنوں میں جو دہشت گرد واقعات ہوئے ہیں اورساتھ ہی طالبان نے ان کی ذمہ داری بھی قبول کی ہے، اس پر ہمیں بہت افسوس ہے۔ وہ حکومت کی کمیٹی کو ہدایت دیں گے کہ وہ یہ معاملہ طالبان کمیٹی کے سامنے اُٹھائے۔

TOPPOPULARRECENT