Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / فیس کی عدم ادائیگی پر طلبہ کی محروسی کے واقعات ملک بھر میں موضوع بحث

فیس کی عدم ادائیگی پر طلبہ کی محروسی کے واقعات ملک بھر میں موضوع بحث

نتائج اور رپورٹس کی عدم اجرائی کا انتباہ، اولیائے طلبہ کی شکایت پر محکمہ تعلیمات کارروائی کیلئے تیار

حیدرآباد۔19مارچ (سیاست نیوز) اسکولو ںمیں فیس کی عدم ادائیگی کے مسئلہ پر طلبہ کے ساتھ اختیار کیا جانے والا سلوک ملک بھر میں بحث کا موضوع بنتا جا رہا ہے ۔ گذشتہ دنوں 19طلبہ کو خانگی اسکول میں فیس کی عدم ادائیگی کی پاداش میں محروس رکھے جانے کی شکایات کے بعد اب اس بات کی شکایات موصول ہو رہی ہیں کہ فیس بقایاجات رکھنے والے طلبہ کے نتائج اور ان کے رپورٹ کارڈ کی اجرائی سے اسکول انتظامیہ انکار رہے ہیں جو کہ مناسب نہیں ہے۔ اسکول انتظامیہ کی جانب سے فیس طلب کیا جانا کوئی بری بات نہیں ہے لیکن فیس کی عدم ادائیگی کے ذمہ دار والدین سے بات کرنے کے بجائے فیس کے لئے بچوں سے دریافت کرنا اور انہیں بھری کلاس میں فیس ادا کرنے کی ہدایت دینا طلبہ میں احساس کمتری پیدا کرنے کا موجب بنتا جا رہا ہے ۔شہر کے کئی اسکولو ںمیں فیس کی عدم ادائیگی کی صورت میں بچوں کے نتائج جاری نہ کئے جانے اورا نہیں رپورٹ نہ دینے کا انتباہ دیا جانے لگا ہے ۔ محکمہ تعلیم کے عہدیداروں کے مطابق اس طرح کا رویہ مناسب نہیں ہے لیکن اولیائے طلبہ و سرپرستوں کی جانب سے کیا جانے والا طریقہ کار بھی درست نہیں ہے اولیائے طلبہ کے طرز عمل کیلئے طلبہ میں احساس کمتری اور انہیں دیگر طلبہ کے سامنے رسواء نہیں کیاجا سکتا ۔ محکمہ تعلیم کے عہدیدارو ں نے بتایا کہ اسکول یا انتظامیہ کے متعلق کسی بھی شکایت کی صورت میں اولیائے طلبہ راست عہدیداروں سے رابطہ قائم کرسکتے ہیں اور تمام متعلقہ عہدیداروں کے فون نمبرات اسکول کے دفتر کی دیوار پر آویزاں ہوتے ہیں ۔ زائد فیس کی وصولی یا انتظامیہ کی جانب سے ہراسانی جیسے مسائل پر اولیائے طلبہ راست رجوع ہوتے ہوئے اپنی شکایت درج کروائیں تاکہ محکمہ کی جانب سے ان کے خلاف کاروائی کو ممکن بنایاجاسکے۔ ضلع ایجوکیشن ڈپارٹمنٹ کے عہدیدار کا کہنا ہے کہ محکمہ کی جانب سے فیس کے امور کے علاوہ اسکول کوتجارتی مراکز میں تبدیل کئے جانے کے خلاف کاروائی کے لئے محکمہ تیار ہے لیکن اولیائے طلبہ اسکول انتظامیہ کے خلاف باضابطہ شکایت کے اندارج سے خائف ہوتے ہیں اور انہیں اپنے بچوں کے مستقبل کی فکر لاحق ہوتی ہے جبکہ شکایت کنندہ کے بچوں کے متعلق دوہرا رویہ اختیار کرنے کی صورت میں اسکول انتظامیہ کے خلاف مزید کاروائی کی گنجائش ہوتی ہے۔ شہر کے بیشتر اسکولو ں میں 20مارچ کو نتائج جاری کئے جانے والے ہیں اور چند اسکولوں میں 18مارچ کو نتائج جاری کئے جا چکے ہیں اسی لئے محکمہ تعلیم نے اس طرح کی شکایات کا جائزہ لینے کا فیصلہ کیا ہے جس میں طلبہ کی فیس کیلئے ان کے نتائج روکنے کی دھمکیاں دی جار ہی ہیں اور بعض اداروں میں ایسا کیا بھی جا رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT