Saturday , May 26 2018
Home / شہر کی خبریں / فیس کے نام پر خانگی اسکولس کی لوٹ کھسوٹ

فیس کے نام پر خانگی اسکولس کی لوٹ کھسوٹ

آئندہ تعلیمی سال کیلئے ابھی سے فیس طلب، والدین اور اولیائے طلبہ کو تشویش
حیدرآباد 19 نومبر (سیاست نیوز) خانگی اسکولس کی جانب سے فیس کے نام پر لوٹ مار کے تدارکی اقدامات کرنے کے لئے سپریم کورٹ کی جانب سے احکامات جاری کئے جانے کے باوجود حکومت خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے اور فیس سے متعلق سرکاری تروپتی راؤ کمیشن نے تاحال رپورٹ پیش نہیں کی ہے۔ ان خیالات کا اظہار حیدرآباد اسکولس پیارنٹ اسوسی ایشن اور تلنگانہ پیارنٹ اسوسی ایشن نے کیا۔ انھوں نے کہاکہ بعض اسکولس کی جانب سے ابھی سے فیس میں اضافہ کرتے ہوئے آئندہ برس کی فیس ماہ جنوری کے اندر ادا کرنے پر زور دیا جارہا ہے۔ اس مناسبت سے پیارنٹس تنظیموں نے سیف آباد میں واقع اسکولس ایجوکیشن ڈائرکٹر کے دفتر پر دھرنا دیتے ہوئے مطالبہ کیاکہ تروپتی راؤ کمیشن کی رپورٹ فوری طور پر منظر عام پر لائی جائے اور فیس ریگولرائزیشن ایکٹ پر عمل آوری کی جائے اور قواعد کی خلاف ورزی کرنے والے اسکولس کی مسلمہ حیثیت کو ختم کیا جائے۔ ٹی پی اے اور ایچ ایس پی اے کے صدور نے الزام عائد کیاکہ حکومت جان بوجھ کر کمیشن کی رپورٹ منظر عام پر نہیں لارہی ہے۔ انھوں نے حکومت سے مطالبہ کیاکہ فوری طور پر حکومت فیس کنٹرول ایکٹ پر عمل آوری کرے اور ساتھ ہی یہ احکامات بھی جاری کرے کہ اسکولس، انتظامیہ سال گزشتہ کی مقررہ فیسوں کو ہی قبول کریں۔

TOPPOPULARRECENT