Tuesday , November 13 2018
Home / شہر کی خبریں / ف12فیصد تحفظات بھول گئے ، معذورین کو 4 فیصد تحفظات کا وعدہ

ف12فیصد تحفظات بھول گئے ، معذورین کو 4 فیصد تحفظات کا وعدہ

کے ٹی آر کے اعلان سے مسلمانوں میں مایوسی،کیا مسلمان صرف ووٹ بینک؟

حیدرآباد۔/10 نومبر، ( سیاست نیوز) مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کا وعدہ ٹی آر ایس حکومت کو یاد نہیں رہا لیکن وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی اور کے سی آر کے فرزند کے ٹی راما راؤ نے معذورین کیلئے 4 فیصد تحفظات کا وعدہ کیا ہے۔ راجنا سرسلہ ضلع میں معذورین کی جانب سے منعقدہ جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کے ٹی آر نے کہا کہ ٹی آر ایس کی دوسری میعاد میں معذوروں کو 4 فیصد تحفظات فراہم کئے جائیں گے۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے معذورین کی بھلائی کیلئے کئی اقدامات کئے ہیں ۔ معذورین کے ماہانہ وظیفہ کو 1500 روپئے کیا گیا ہے اور انتخابات کے بعد وظیفہ کی رقم ماہانہ 3016 روپئے ہوجائے گی۔ انہوں نے کہا کہ 8 کروڑ روپئے کے خرچ سے 7500 معذورین میں آلات تقسیم کئے گئے۔ انہوں نے تیقن دیا کہ معذورین کیلئے چھوٹے کاروبار کے آغاز میں مدد کرنے قرض فراہم کیا جائے گا۔ انہوں نے شمس آباد میں معذورین کیلئے 10ایکر اراضی پر خصوصی آئی ٹی پارک کے قیام کا اعلان کیا۔ کے ٹی آر نے اپنے خطاب میں معذورین کی بھلائی اور بہبودی سے متعلق کئی اعلانات کئے اور انہیں ٹی آر ایس کی تائید پر راضی کرنے کی کوشش کی۔ سرسلہ میں موجود اقلیتی رائے دہندوں کو کے ٹی آر کی معذورین سے ہمدردی پر حیرت ہوئی کیونکہ کے ٹی آر نے کبھی بھی مسلمانوں کے 12 فیصد تحفظات پر عمل آوری کی فکر نہیں کی اور انتخابی جلسوں میں وہ اس کا تذکرہ کرنے سے گریز کررہے ہیں۔ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کا اعلان محض کان خوش کرنے کی کوشش ثابت ہوا لیکن اب معذورین کیلئے 4 فیصد تحفظات کا نیا شوشہ چھوڑا گیا ہے۔مسلمان چاہتے ہیں کہ کے ٹی آر پہلے مسلم تحفظات کی وضاحت کریں بعد میں معذورین کیلئے 4 فیصد کا وعدہ کیا جائے۔ آبادی میں معذورین کا حصہ انتہائی کم ہوتا ہے اس کے باوجود کے ٹی آر کو ان کے ووٹ حاصل کرنے کی اس قدر اہمیت ہے کہ انہوں نے تحفظات کا وعدہ کردیا جبکہ آبادی میں 14 فیصد موجود مسلم اقلیت کیلئے آج تک کوئی ٹھوس اعلان نہیں کیا گیا۔ پارٹی نے اسمبلی انتخابات کیلئے جزوی انتخابی منشور جاری کردیا ہے لیکن اس میں مسلمانوں کے بارے میں ایک لفظ بھی شامل نہیں تھا۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا مسلمانوں سے زیادہ ٹی آر ایس کے پاس معذورین کی اہمیت ہے۔ سرسلہ کے مسلم رائے دہندے یہ سوچنے پر مجبور ہیں کہ کے ٹی آر نے مسلمانوں کو معذروں سے بھی کمتر سمجھ لیا ہے ورنہ وہ کم از کم انتخابی جلسوں میں 12 فیصد پر عمل آوری کا تیقن دیتے۔ کے ٹی آر کے موقف سے صاف ظاہر ہے کہ 12 فیصد تحفظات کا اعلان عمل آوری کیلئے نہیں بلکہ محض ووٹ حاصل کرنے کیلئے تھا۔

TOPPOPULARRECENT