Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / ف12 فیصد مسلم تحفظات پر مودی سے مثبت ردعمل کا ادعا ٹائیں ٹائیں فش

ف12 فیصد مسلم تحفظات پر مودی سے مثبت ردعمل کا ادعا ٹائیں ٹائیں فش

مختار عباس نقوی کے بیان سے مایوسی ، ٹی آر ایس و بی جے پی خفیہ سازباز ، سید عظمت اللہ حسینی
حیدرآباد ۔ 27 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : جنرل سکریٹری تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی سید عظمت اللہ حسینی نے کہا کہ چیف منسٹر کے سی آر نے اسمبلی میں 12 فیصد مسلم تحفظات کے لیے وزیراعظم نریندر مودی سے مثبت ردعمل حاصل ہونے کا جو اعلان کیا ہے ۔ وہ مرکزی وزیر اقلیتی امور مختار عباس نقوی کے بیان سے ’ ٹائیں ٹائیں فش ‘ ہوگیا ۔ ٹی آر ایس اور بی جے پی ایک دوسرے سے خفیہ سازباز کرتے ہوئے مسلمانوں کے جذبات سے کھلواڑ کررہے ہیں ۔ حکومت تلنگانہ مسلم تحفظات میں توسیع دینے کے لیے سنجیدہ ہے تو میٹرو ٹرین کے افتتاح اور عالمی کانفرنس میں شرکت کرنے کے لیے 28 نومبر کو حیدرآباد پہونچنے والے وزیراعظم نریندر مودی سے اس کا اعلان کرائے ۔ سید عظمت اللہ حسینی نے کہا کہ کانگریس مسلم تحفظات کے لیے سنجیدہ ہے اور وعدے کے مطابق مسلمانوں کو 4 فیصد تحفظات بھی فراہم کیا ہے ۔ ٹی آر ایس حکومت نے مسلم تحفظات میں مزید 8 فیصد توسیع دینے کے لیے اسمبلی اور کونسل میں ایک قرار داد پیش کی ہے ۔ جس کی بھی کانگریس نے غیر مشروط تائید کی ہے ۔ مگر مسلم تحفظات کے معاملے میں چیف منسٹر تلنگانہ کی نیت میں کھوٹ ہے اور حکومت سنجیدہ نہیں ہے ۔ بی جے پی کے قومی صدر امیت شاہ سے لے کر تلنگانہ بی جے پی کے صدر ڈاکٹر لکشمن نے مسلم تحفظات کی مخالفت کی ہے ۔ لیکن چیف منسٹر نے جمہوریت میں عبادت گاہ کا درجہ رکھنے والی اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی انہیں مسلم تحفظات کوٹہ میں توسیع کے لیے مثبت ردعمل حاصل ہونے کا اظہار کیا ہے ۔ مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے مسلم تحفظات کوٹہ کو غیر جمہوری قرار دیا ہے اور یہ بھی واضح کردیا کہ مرکزی حکومت تلنگانہ کے مسلم تحفظات کوٹہ میں توسیع دینے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتی ۔ انہوں نے ووٹ بینک کی خاطر جھوٹ بولتے ہوئے مسلمانوں کو ’ لالی پاپ ‘ دینے کا بھی الزام عائد کیا ہے ۔ چیف منسٹر تلنگانہ اس پر فوری ردعمل کا اظہار کریں اور مسلمانوں میں پائی جانے والی بے چینی کو دور کرنے کے لیے 28 نومبر کو حیدرآباد پہونچنے والے وزیراعظم نریندر مودی سے مسلم تحفظات کی تائید میں بیان دلاتے ہوئے 12 فیصد مسلم تحفظات کے لیے اپنی سنجیدگی کا عملی ثبوت پیش کریں ۔۔

TOPPOPULARRECENT