Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / قائد اپوزیشن سے متعلق فیصلہ اسپیکر کا ہوگا

قائد اپوزیشن سے متعلق فیصلہ اسپیکر کا ہوگا

مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو کا خطاب

مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو کا خطاب
حیدرآباد۔/6جولائی، ( پی ٹی آئی) یہ کہتے ہوئے کہ قائد اپوزیشن کا موقف عطاء کرنے کا معاملہ اسپیکر لوک سبھا کے پاس ہے، مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو نے آج کہا کہ ہر ایک کو کرسی صدارت کے فیصلہ کو قبول کرنا چاہیئے۔ وینکیا نائیڈونے کہا کہ ’’ نہرو جی کے دور حکومت میں قائد اپوزیشن نہیں تھا۔ اندرا گاندھی کے دور میں کوئی قائد اپوزیشن نہیں تھا۔ راجیو گاندھی کے دور حکومت میں اپوزیشن قائد نہیں تھا۔‘‘ لیکن بی جے پی کے دور حکومت میں قائد اپوزیشن کا موقف دیا جانا چاہیئے۔ وہ ( کانگریس قائدین ) کہتے ہیں کہ کس طرح نہیں دیا جاسکتا ہے اور دستور اس کی اجازت نہیں دیتا۔ ان کا کہنا ہے کہ اس وقت کی اور اب کی حالت بالکل جداگانہ ہے۔ مرکزی وزیر پارلیمانی اُمور نے آج یہاں بی جے پی آفس پر منعقدہ ایک ایونٹ سے مخاطب کرتے ہوئے یہ بات کہی۔ انہوں نے کہا ’’ ان کا کہنا ہے کہ آپ قائد اپوزیشن کا موقف عطا کرنے میں فراخدل ہوں۔ یہ عوام کا فیصلہ ہے اور دستور سے تعلق رکھنے والا معاملہ ہے۔ اسپیکر کے فیصلہ کو ماننا چاہیئے، اور دیکھیں اسپیکر کا فیصلہ کیا ہوتا ہے۔ اس میں کچھ اُصول و قواعد، طریقہ کار وغیرہ ہوتے ہیں اور ہر ایک کو اس کی پابندی کرنی چاہیئے۔‘‘ کانگریس قائد شکیل احمد کے مبینہ ریمارکس کے بارے میں پوچھے جانے پر جس میں انہوں نے کہا کہ قائد اپوزیشن کا موقف حاصل کرنا ان کا حق ہے اگر یہ ان کی پارٹی کو نہیں دیا گیا تو پارلیمنٹ کو چلنے نہیں دیا جائے گا۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ کانگریس شکست کو تسلیم کرنے کے موقف میں نہیں ہے۔ بی جے پی کے سینئر قائد مسٹر نائیڈو نے کہا کہ عوام نے انہیں جو فیصلہ کرنا تھا کردیا ہے، ہمیں امید ہے کہ کانگریس اور ہم سب ملکر پارلیمنٹ چلائیں گے اور عوام کی فلاح و بہبود اور ملک کی ترقی کیلئے کوشش کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT