Tuesday , September 25 2018
Home / Top Stories / قائد اپوزیشن مسئلہ، کھرگے کی اسپیکر لوک سبھا سے ملاقات

قائد اپوزیشن مسئلہ، کھرگے کی اسپیکر لوک سبھا سے ملاقات

نئی دہلی۔ 9 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) لوک سبھا میں قائد کانگریس پارلیمانی پارٹی ملکارجن کھرگے نے آج اسپیکر سمترا مہاجن سے ملاقات کی اور رسمی طور پر ایوان میں قائد اپوزیشن کے عہدہ پر پارٹی کا دعویٰ پیش کیا۔ یہ مسئلہ متنازعہ بن چکا ہے۔ ملکارجن کھرگے نے اسپیکر سے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس نے یو پی اے کے 60 ا

نئی دہلی۔ 9 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) لوک سبھا میں قائد کانگریس پارلیمانی پارٹی ملکارجن کھرگے نے آج اسپیکر سمترا مہاجن سے ملاقات کی اور رسمی طور پر ایوان میں قائد اپوزیشن کے عہدہ پر پارٹی کا دعویٰ پیش کیا۔ یہ مسئلہ متنازعہ بن چکا ہے۔ ملکارجن کھرگے نے اسپیکر سے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس نے یو پی اے کے 60 ارکان پارلیمان کی دستخطوں کے ساتھ ایک یادداشت پیش کردی ہے۔ اب یہ اسپیکر کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس مسئلہ کا جائزہ لیں، ان سے سوال کیا گیا تھا کہ کانگریس پارٹی کو اس مسئلہ پر کتنے دن میں فیصلہ کی توقع ہے۔ نائب قائد کانگریس پارلیمانی پارٹی امریندر سنگھ نے پارٹی کے چیف وہپ جیوتر آدتیہ سندھیا کے ساتھ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یادداشت کے پیش نظر عاجلانہ فیصلہ کرنے میں کوئی مشکل درپیش نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خیال میں یہ کوئی مشکل مسئلہ نہیں ہے۔ اس سوال پر کہ یادداشت میں پارٹی نے کتنا واجبی وقت دیا ہے، کھرگے نے کہا کہ اسپیکر سے کہا گیا ہے کہ کانگریس واحد سب سے بڑی پارٹی ہے اور قائد اپوزیشن کا عہدہ اب اہمیت رکھتا ہے، کیونکہ قائد اپوزیشن مرکزی ویجیلنس کمیشن اور لوک پال کے تقرر کے بعد فیصلہ سازی کے عمل میں شامل ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ میں قائد اپوزیشن کی تنخواہوں اور الاؤنسیس کے قانون 1977ء اس بات کو واضح طور پر بیان کرتا ہے کہ واحد سب سے بڑی پارٹی کو قائد اپوزیشن کا عہدہ حاصل ہونا چاہئے۔ پارٹی کا نمائندہ جو سب سے بڑی اپوزیشن پارٹی ہو، قائد اپوزیشن تسلیم کیا جانا چاہئے۔ کھرگے نے مزید کہا کہ کوئی بھی قواعد اس قانون پر غلبہ نہیں رکھتے۔ کھرگے کی اسپیکر کے ساتھ ملاقات سے ایک دن قبل صدر کانگریس سونیا گاندھی نے اس مسئلہ پر پارٹی ارکان پارلیمنٹ کا ایک اجلاس منعقد کیا تھا۔مرکزی وزیر پارلیمانی اُمور ایم وینکیا نائیڈو نے کہا تھا کہ راجیہ سبھا کی طرح لوک سبھا میں بھی مسلمہ قائد اپوزیشن کی موجودگی پر حکومت کو خوشی ہوگی۔ 543 رکنی لوک سبھا میں کانگریس کی 44 نشستیں ہیں۔

TOPPOPULARRECENT