Wednesday , December 19 2018

قانون تنظیم جدید آندھراپردیش کے تحت تلنگانہ و آندھراپردیش کے مسائل حل کرنے کا مطالبہ

این ایس ایس و پریس کلب کا کل جماعتی راونڈ ٹیبل اجلاس، سیاسی قائدین کا خطاب

این ایس ایس و پریس کلب کا کل جماعتی راونڈ ٹیبل اجلاس، سیاسی قائدین کا خطاب
حیدرآباد ۔ 27 ڈسمبر (سیاست نیوز) نیوز اینڈ سرویسیس سنڈیکیٹ (این ایس ایس) اور پریس کلب حیدرآباد کے زیراہتمام پریس کلب سوماجی گوڑہ میں آج قانون تنظیم جدید آندھراپردیش 2014ء پر عدم عمل آوری پر تمام پارٹیوں کے راؤنڈ ٹیبل اجلاس منعقد ہوا جس میں ریاست تلنگانہ اور ریاست آندھراپردیش سے تعلق رکھنے والی مختلف سیاسی جماعتوں جن میں کانگریس، سی پی آئی، تلگودیشم، ایم آئی ایم، وائی ایس آر کانگریس، عام آدمی پارٹی، جئے سمکھیا آندھرا پارٹیوں سے وابستہ قائدین اور دیگر دانشوروں نے شرکت کی۔ اس موقع پر رکن قانون ساز کونسل (کانگریس) مسٹر کملاکر راؤ، ایم ایل سی جعفری، سابق رکن پارلیمان (سی پی آئی) مسٹر سید عزیز پاشاہ، رکن اسمبلی (تلگودیشم) مسٹر راؤلا چندراشیکھر ریڈی، قائد وائی ایس آر کانگریس مسٹر جی رامچندر راؤ، قائد سی پی ایم شریمتی جیوتی، قائد جئے سمکھیا آندھرا مسٹر تلسی ریڈی، قائد سی پی آئی مسٹر کے راما کرشنا، قائد وائی ایس آر کانگریس مسٹر اے رام بابو، قائد کانگریس پارٹی مسٹر آر راجو، قائد عام آدمی پارٹی مسٹر وینکٹ ریڈی، اے پی انٹلکچول قائد مسٹر چلا سوامی پرساد، پروفیسر ویشویشور راؤ نے مخاطب کرتے ہوئے مرکزی حکومت سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر قانون تنظیم جدید آندھراپردیش 2014ء کو عملی جامہ پہناتے ہوئے نوتشکیل شدہ ریاست تلنگانہ اور ریاست آندھراپردیش دونوں ریاستوں کو درپیش مسائل کی یکسوئی کیلئے ضروری اقدامات کئے جائیں۔ انہوں نے مرکزی حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ دونوں ریاستوں کی تشکیل عمل میں آکر زائد از 7 ماہ کا عرصہ گذر گیا اور دونوں ریاستوں میں برسراقتدار حکومتوں کو درپیش مسائل جوں کے توں برقرار ہیں اس کے باوجود قانونی تنظیم، نو آندھراپردیش پر عمل آوری میں سست روی کا مظاہرہ کررہی ہے جس کے نتیجہ میں دونوں ریاستوں کے عوام کو خمیازہ بھگتنا پڑ رہا ہے اور دونوں ریاستوں میں قانون نظم و ضبط کی برقراری اور عوام کو درپیش مسائل کے حل میں کافی دشواریوں کا سامنا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ دونوں ریاستوں کو آئی اے ایس، آئی پی ایس، آئی ایف ایس عہدیداروں، برقی، پانی دیگر محکمہ جات کی عدم تقسیم کے نتیجہ میں دونوں ریاستوں کی ترقی میں رکاوٹیں حائل ہورہی ہیں۔ ان قائدین نے مرکزی حکومت پر زور دیا کہ وہ آندھراپردیش تنظیم جدید نو ایکٹ ۔ 2014 قانون پر فوری عمل آوری کے احکامات جاری کرتے ہوئے دونوں ریاستوں کی ترقی میں حائل رکاوٹوں کا تدارک کرے۔ اس موقع پر منیجنگ ڈائرکٹر این ایس ایس مسٹر لکشماریڈی، سینئرایڈیٹر این ایس ایس مسٹر ایم پی رویندر ناتھ، صدر پریس کلب حیدرآباد مسٹر روی کانت ریڈی، سینئر جرنلسٹ پی آر کے پرساد بھی موجود تھے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT