Saturday , September 22 2018
Home / شہر کی خبریں / قانون حق تعلیم کے اقدامات سے کئی غیر سرکاری تنظیمیں غیر مطمئن

قانون حق تعلیم کے اقدامات سے کئی غیر سرکاری تنظیمیں غیر مطمئن

تلنگانہ و اے پی میں عمل آوری کا فیصد صفر، سخت عمل پر سینکڑوں طلبہ کو فائدہ ممکن

تلنگانہ و اے پی میں عمل آوری کا فیصد صفر، سخت عمل پر سینکڑوں طلبہ کو فائدہ ممکن
حیدرآباد 14 جون (سیاست نیوز) ریاست میں قانون حق تعلیم پر عمل آوری کو یقینی بنانے کے لئے جاری اقدامات سے کئی غیر سرکاری تنظیمیں مطمئن نہیں ہیں چونکہ سرکاری مشنری کی جانب سے قانون حق تعلیم 2009 کو قابل عمل بنانے کے لئے کوئی مثبت اقدامات نہیں کئے جارہے ہیں۔ جس کے سبب ریاست تلنگانہ و آندھراپردیش میں 2014-15 ء تعلیمی سال کے دوران اِس قانون پر عمل آوری کا فیصد صفر رہا۔ ملک بھر میں قانون حق تعلیم پر عمل آوری میں سب سے زیادہ آگے دہلی رہی جہاں 92 فیصد طلبہ آر ٹی ای کے ذریعہ مفت داخلے حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ ریاست آندھراپردیش و تلنگانہ میں اگر قانون حق تعلیم پر مؤثر عمل آوری کی جاتی ہے تو ایسی صورت میں ریاست کے خانگی غیر امدادی اسکولوں میں 1,75,810 طلبہ کو مفت تعلیم حاصل کرنے کا موقع میسر آسکتا ہے۔ لیکن اِس کے باوجود حکومت کی جانب سے اِس مسئلہ پر توجہ نہ دیئے جانے کے باعث آر ٹی ای پر عمل آوری نہیں ہوپارہی ہے۔ حکومت نے ریاست میں قانون حق تعلیم پر مؤثر عمل آوری کے لئے درکار وقت میں بھی کوئی اقدامات نہیں کئے جس کی وجہ سے خانگی اسکولس کے ذمہ داران آر ٹی ای کے تحت داخلے حاصل کرنے سے انکار کررہے ہیں۔ لیکن تعلیمی سال 2015-16 ء کے دوران ریاست تلنگانہ میں تمام اسکولوں پر یہ لازمی ہے کہ وہ 25 فیصد مستحق طلبہ کو مفت تعلیم و داخلے کا انتظام کرے بصورت دیگر اُن کے خلاف محکمہ جاتی کارروائی کی جاسکتی ہے۔ ہر بچہ کو تعلیم کا حق فراہم کرنے کے لئے 2009 ء میں کی گئی قانون سازی کے مطابق تمام خانگی و غیر امدادی اسکولوں کو اِس بات کا پابند بنایا گیا ہے کہ وہ آر ٹی ای کے تحت 25 فیصد داخلے مفت فراہم کریں اور اِس پر بہر صورت عمل آوری کو یقینی بنائے تاکہ معاشی طور پر پسماندہ افراد کے بچوں کو بہتر تعلیم کی فراہمی کو یقینی بنایا جاسکے۔ شہر حیدرآباد میں مختلف تنظیموں کی جانب سے آر ٹی ای کے متعلق شعور بیداری مہم چلائی جارہی ہے اور اِس سے مؤثر بنانے کے لئے متعدد نمائندگیاں بھی کی جاچکی ہیں۔ اِسی طرح حکومت کو متوجہ کرنے اور عوام میں شعور بیداری کے لئے 15 جون کو چارمینار تا مدینہ بلڈنگ ایک ریالی بھی منظم کی جارہی ہے جس میں سیاسی، مذہبی و سماجی کارکن حصہ لیتے ہوئے 25 فیصد غریب طلبہ کو مفت داخلوں کی فراہمی کو یقینی بنانے کا مطالبہ کریں گے۔ علاوہ ازیں اِس ریالی کے دوران آر ٹی ای قانون پر عمل آوری کے لئے تشکیل کردہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کی جانب سے آئندہ دو ماہ کے دوران کئے جانے والے اقدامات کے منصوبوں کا اعلان کیا جائے گا۔ بتایا جاتا ہے کہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے آر ٹی آئی کے استعمال کے ذریعہ آر ٹی ای پر عمل کرنے والوں کی تفصیلات حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT