قران

وہ جو رب ہے آسمانوں اور زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے۔ اگر تم ایماندار ہو۔ نہیں کوئی معبود بجز اس کے وہ زندہ کرتا ہے اور مارتا ہے، تمہارا بھی رب ہے اور تمہارے پہلے باپ دادا کا بھی رب ہے۔ (سورۃ الدخان۔۷،۸)

وہ جو رب ہے آسمانوں اور زمین کا اور جو کچھ ان کے درمیان ہے۔ اگر تم ایماندار ہو۔ نہیں کوئی معبود بجز اس کے وہ زندہ کرتا ہے اور مارتا ہے، تمہارا بھی رب ہے اور تمہارے پہلے باپ دادا کا بھی رب ہے۔ (سورۃ الدخان۔۷،۸)
اس آیت سے جہاں اللہ تعالی کی ربوبیت عامہ کا پتہ چلتا ہے، جس کی وسعتیں بلندیوں اور پستیوں کو اپنے دامن میں سمیٹے ہوئے ہیں اور جس کی ذرہ نوازیاں ہر خورد و کلاں کا سہارا بنی ہوئی ہیں، وہاں قرآن کی رفعت شان اور جلالت منزلت کا علم بھی حاصل ہوتا ہے۔ نیز یہ بھی بتادیا کہ جب ہر چیز کا پروردگار وہ ہے تو حکم بھی اسی کا ناطق ہوگا۔ کسی بندہ کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ خوں و چرا کرے۔ اگر تم ایماندار ہو‘‘ کہہ کر کفار کو متنبہ کیا جا رہا ہے کہ زبان سے تو تم بھی اعتراف کرتے ہو کہ زمین و آسمان کا خالق و مالک اللہ تعالی ہے۔ اگر تمہارے دل بھی اس کو مانتے ہیں تو پھر تمھیں اس کتاب اور صاحب کتاب کی اطاعت میں لیت و لعل کرنے کا کوئی حق نہیں۔ رب ماننا اور اس کا حکم نہ ماننا، مالک کہنا اور اس کے بھیجے ہوئے رسول سے مخاصمت، کوئی ہوش مند ایسا نہیں کیا کرتا۔
یہ حقیقت جب روز روشن کی طرح واضح ہو گئی کہ بلندیوں اور پستیوں میں جو کچھ ہے، اس کا خالق و مالک اللہ تعالی ہے۔ اس کا کوئی فعل حکمت سے خالی نہیں، اس کا ہر فیصلہ، اس کی رحمت کا مظہر ہے۔ اب اس حقیقت سے انکار بھی پرلے درجے کی حماقت ہے۔ بے شک صرف وہی معبود ہے، وہی اس کا سزاوار ہے کہ اس کی بندگی اور عبادت کی جائے۔ زندہ کرنا اور مارنا اسی کی شان ہے۔ کان کھول کر سن لو! تمہارا اور تمہارے آباء و اجداد کا خالق و مالک وہی ہے۔ ایسی باکمال اور ذوالجلال والاکرام ہستی پر ایمان نہ لانا بڑی نادانی ہے۔

TOPPOPULARRECENT