Thursday , December 14 2017

قران

ہر نفس چکھنے والا ہے موت کو اور پوری مل کر رہے گی تمھیں تمہاری مزدوری قیامت کے دن پس جو شخص بچالیا گیا آتشِ (دوزخ) سے اور داخل کیا گیا جنت میں تو وہ کامیاب ہوگیا اور نہیں یہ دنیوی زندگی مگر سازو سامان دھوکہ میں ڈالنے والا۔یقیناً تم آزمائے جاؤ گے اپنے مالوں سے اور اپنی جانوں سے اور یقیناً تم سنوگے ان سے جنھیں دی گئی کتاب تم سے پہلے اور ان لوگوں سے جنھوں نے شرک کیا اذیت دینے والی بہت باتیں اور اگر تم (ان دل آزاریوں پر ) صبر کرو اور تقویٰ اختیار کرو تو بےشک یہ بڑی ہمت کا کام ہے۔ ( ال عمران : ۱۸۵۔۱۸۶)
اس میں یہود اور منکرین کو تنبیہ کی جا رہی ہے کہ وہ دن آنے والا ہے جب تمہیں موت کا پیالہ پینا پڑے گا اور اپنے کئے کی سزا بھگتنی پڑے گی۔ اور اس میں ان مسلمانوں کے لئے تسلی بھی ہے جو قبول اسلام کے بعد اپنوں اور بیگانوں کے مظالم کا ہدف بنے ہوئے تھے کہ گھبراؤ نہیں حق کے لئے اپنی زندگی کے چار روز جیسے گزرتے ہیں گزار لو۔ اور وہ دن آنے والا ہے جب تمہیں اس کا اجر عظیم عطا فرمایا جا ئے گا۔اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو پہلے ہی بتا رہے ہیں کہ مدینہ کی غیر مسلم آبادی، مشرک اور اہل کتاب سے اچھے سلوک کی توقع مت رکھو۔ وہ تمہارے مال وجان کو گزند پہنچائیں گے اور تمہارے محبوب رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کی شان میں زبان درازی کی جائے گی۔ اگر ایسے نازک حالات میں بھی تم نے صبرو استقامت کا دامن نہ چھوڑا اور اپنے بلند کردار پر جمے رہے تو تمہاری عظمت ورفعت پر انسانیت فخر کرے گی۔ اور ایسا کرنا ہر ایک کے بس کی بات نہیں بلکہ بڑی ہمت کا کام ہے۔

TOPPOPULARRECENT