Thursday , September 20 2018
Home / Top Stories / قومی سطح پر مجوزہ تیسرے محاذ کے قیام کی کوششیں

قومی سطح پر مجوزہ تیسرے محاذ کے قیام کی کوششیں

کے سی آر کانگریس کی شمولیت کے سخت مخالف ‘ ممتابنرجی کا لچکدار موقف ‘ خاموشی کو ترجیح

حیدرآباد 20 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر تلنگانہ کے چندر شیکھر راؤ اور چیف منسٹر مغربی بنگال ممتابنرجی نے کل کولکتہ میں اپنی ملاقات کے موقع پر ایک وفاقی محاذ قائم کرنے ملاقات کی اور مذاکرات کی شروعات کی ۔ بات چیت کے بعد چندر شیکھر راؤ اس بات پر زور دیتے رہے کہ ملک میں ایک چمتکار کی ضرورت ہے جو کانگریس اور بی جے پی کے بغیر تیسرے محاذ کے قیام سے ممکن ہوسکتا ہے ۔ جہاں چندر شیکھر راؤ نے یہ واضح کیا کہ مجوزہ محاذ کانگریس اور بی جے پی شامل نہیں رہیں گے وہیں ترنمول کانگریس کی سربراہ ممتابنرجی محاذ میں کانگریس کی عدم شمولیت کے تعلق سے کوئی تبصرہ کرنے سے گریزاں رہیں۔ چندر شیکھر راؤ کا کہنا تھا کہ اگر بی جے پی کو شکست ہو اور کانگریس کو اقتدار مل جائے تو کیا چمتکار ہوسکتا ہے ؟ ۔ چمتکار وہی ہوگا جس میں کانگریس اور بی جے پی کے بغیر کسی محاذ کو کامیابی ملے ۔ یہ ایسا کچھ ہونا چاہئے جو 71 سال میں ملک کے عوام نے نہیں دیکھا ہو۔ چندر شیکھر راؤ خاص طور پر ممتابنرجی سے ملاقات کیلئے کل اپنے پارٹی قائدین کے ہمراہ کولکتہ پہونچے تھے ۔ یہ ملاقات ایسے وقت میں ہوئی ہے جب انتشار کا شکار اپوزیشن جماعتوں کو گورکھپور اور پھولپور لوک سبھا حلقوں کے ضمنی انتخاب کے نتائج کے بعد آپسی اتحاد میں امید کی کرن دکھائی دے رہی ہے ۔ چندر شیکھر راؤ کا کہا تھا کہ مجوزہ محاذ وفاقی محاذ ہوگا اور اس کی اجتماعی قیادت ہوگی ۔ وہ اس میں کانگریس کی شمولیت کی کھلے عام مخالفت کر رہے ہیںکیونکہ انہیں تلنگانہ میں راست کانگریس سے مقابلہ درپیش ہے ۔ تاہم ممتابنرجی اس تعلق سے کچھ بھی کہنے سے گریزاں ہیں کیونکہ وہ پہلے بھی اس پارٹی کے ساتھ مل کر کام کرچکی ہیں۔ ترنمول کانگریس کے ذرائع کا کہنا تھا کہ ممتابنرجی سیاسی لچکدار موقف میں یقین رکھتی ہیں۔ وہ ایک مشترکہ مقصد کی تکمیل کیلئے باہمی اختلافات کو بالائے طاق رکھنے سے گریز نہیں کرینگی ۔ ذرائع کا کہنا تھا کہ ممتابنرجی یہ سمجھنے سے قاصر ہیں کہ کانگریس کو کس طرح ایسے محاذ سے باہر رکھا جاسکتا ہے خاص طور پر اس صورتحال میں جبکہ کانگریس کرناٹک میں اچھی انتخابی کارکردگی دکھائے ۔ ممتابنرجی نے اپوزیشن اتحاد کے تعلق سے کانگریس صدر راہول گاندھی کے ریمارکس کا بھی کل تذکرہ کیا تھا اور کہا تھا کہ وہ ان کی بات سے پوری طرح اتفاق کرتی ہیں۔ انہوں نے چندر شیکھر راؤ کے ریمارکس کے تعلق سے کہا کہ جو کچھ مسٹر راؤ کو کہنا تھا انہوں نے کہا ہے ۔ وہ اس سے اتفاق کرتی ہیں ۔ انہیں جو کہنا ہے کہنے دیں۔ وہ اپنے خیالات کا اظہار کرچکے ہیں۔ جب ممتابنرجی سے سوال کیا گیا تھا کہ آیا مجوزہ محاذ کانگریس صدر راہول گاندھی کو مسترد کرتا ہے ممتابنرجی نے فوری کہا تھا کہ انہوں نے ایسا کچھ نہیں کہا ہے ۔ میڈیا اپنے الفاظ ان کے منہ میں ڈالنے کی کوشش نہ کرے ۔ انہوں نے راہول گاندھی کے بیان سے بھی اتفاق کیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT