Monday , October 22 2018
Home / ہندوستان / قومی سلامتی امور میں مسلمانوں کو بھی شامل کیا جائے

قومی سلامتی امور میں مسلمانوں کو بھی شامل کیا جائے

ہندوستانی مسلمانوں کے غیرذمہ دار شہری ہونے کا تصور ختم کیا جائے ، دہلی میں کانفرنس
نئی دہلی ۔ /12 اگست (سیاست ڈاٹ کام) قومی سلامتی سے متعلق معاملوں میں مسلمانوں کے عظیم تر رول کو یقینی بنانے پر زور دیتے ہوئے مسلم اسکالرس نے کہا کہ قومی سلامتی پالیسی کو مضبوط بنانے کی ضرورت ہے ۔ نئی دہلی میں مسلم تنظیموں کی جانب سے منعقدہ ایک کانفرنس میں کہا گیا ہے کہ مسلمانوں کے تعلق سے غلط تاثر پیدا کیا گیا ہے ۔ مسلم اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن آف انڈیا نے قومی سلامتی سے متعلق ایک روزہ کانفرنس کا اہتمام کیا تھا ۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سید محمد قادری نے کہا کہ مسلمانوں کے خلاف ابنائے وطن میں غلط تاثر پیدا کیا جارہا ہے ۔ ملک کے اندر یہ خیال پیدا کیا جاچکا ہے کہ ہندوستانی مسلمان غیرذمہ دار شہری ہوتے ہیں لیکن ہمارا دعویٰ یہ ہے کہ قومی سلامتی پالیسی میں مسلمانوں کو شامل کرکے دیکھا جائے تو مسلمان اپنے ملک کے لئے قابل بھروسہ شہری ثابت ہوں گے ۔ قومی سلامتی کیلئے مسلم نوجوانوں کے رول کا درست جائزہ لینے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے ہندوستانی مسلمانوں سے سوال کیا کہ ان کے تعلق سے آخر غلط تاثر کیوں پیدا کیا گیا ۔ ہمیں آئی ایس آئی ایس یا دیگر تنظیموں میں شامل ہونے کی کیا ضرورت ہے ۔ اسامہ بن لادن ہمارا آئیڈیل نہیں ہے ۔ خواجہ غریب نواز ہمارے آئیڈیل ہیں ۔ شاہنواز احمد مالک وارثی علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کیرالا سنٹر نے کہا کہ ملک میں انسانی حقوق اور سماجی انصاف کو درپیش چیالنجس کا نوٹ لینا ضروری ہے ۔ سماج میں یہ مسائل گہرے ہوتے جارہے ہیں ۔ مسلمانوں اور دلت طبقہ کو غیرضروری نفرت کا شکار بنانا اور فرقہ پرستی کو ہوا دینا تشویش کا باعث ہے ۔ سماجی ہم آہنگی کو فروغ دینے کی ضرورت ہے ۔ شجاعت علی قادری صدر مسلم اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن آف انڈیا نے کہا کہ ہندوستانی مسلم نوجوانوں کی اکثریت صوفی طبقہ سے تعلق رکھتی ہے جو ملک سے نہ صرف محبت کرتے ہیں بلکہ اس سرزمین کا اکرام بھی کرتے ہیں ۔ قومی تعمیر میں مسلم نوجوانوں کے عظیم تر رول کو یقینی بنانے پر زور دیا گیا ۔

TOPPOPULARRECENT