Friday , December 15 2017
Home / ہندوستان / قومی سلامتی پر مودی حکومت کے پاس کوئی پالیسی نہیں

قومی سلامتی پر مودی حکومت کے پاس کوئی پالیسی نہیں

’’چوڑیاں اُتار کر کچھ کیجئے‘‘، دو سپاہیوں کی ہلاکت کے باوجود دہلی میں بی جے پی کا جشن افسوسناک : کانگریس
نئی دہلی۔ 2 مئی (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے جموں و کشمیر کے ضلع پونچھ میں دو سپاہیوں کی پاکستانی فوج کے ہاتھوں ہلاکت پر نریندر مودی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ قومی سلامتی پر حکومت کے پاس کوئی پالیسی نہیں ہے۔ کانگریس کے ترجمان کپل سبل نے کہا کہ یہ انتہائی شرمناک پہلو ہے کہ حکمراں بی جے پی دہلی بلدی انتخابات میں کامیابی کا جشن منا رہی ہے، دوسری طرف پاکستان نے ہمارے ہی علاقہ میں ہمارے دو سپاہیوں کو ہلاک کردیا۔ انہوں نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اسے ’’چوڑیاں اُتار کر کچھ کرنا چاہئے‘‘۔ کپل سبل دراصل وزیر امور خارجہ سشما سوراج کا حوالہ دے رہے تھے جنہوں نے منموہن سنگھ کو اس وقت چوڑیاں بھیجنے کی پیشکش کی تھی جب یو پی اے دور اقتدار میں پاکستان نے ہندوستانی سپاہیوں کا سر قلم کیا تھا۔ کپل سبل نے دعویٰ کیا کہ یو پی اے حکومت کے مقابلے موجودہ این ڈی اے دور میں گزشتہ 35 ماہ کے دوران عام شہریوں اور سکیورٹی عملہ کو ہوئے نقصانات میں کافی اضافہ ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت سرحد پار دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے موثر پالیسی کو اسی وقت قطعیت دے سکتی ہے جب فل ٹائم وزیر دفاع موجود ہو۔کپل سبل نے کہا کہ اگست 2011ء سے مئی 2014ء تک جموں و کشمیر میں 50 شہری اور 103 جوان ہلاک ہوئے تھے۔ اس کے برعکس موجودہ حکومت کے گزشتہ 35 ماہ میں 91 شہری اور 198 جوان ہلاک ہوئے ہیں۔ اس دوران جنتا دل (یو) نے بھی جموں و کشمیر کی صورتحال پر مودی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ پارٹی ترجمان راجیو رنجن پرساد نے کہا کہ ہند۔ پاک روابط اور جموں و کشمیر کے مسئلہ پر اپوزیشن کی بھرپور تائید کے باوجود مودی حکومت اس مسئلہ سے نمٹنے میں ناکام رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ریاست جموں و کشمیر دہشت گردی کی آگ میں جل رہی ہے اور یہاں عوام کو انتخابات سے کوئی دلچسپی باقی نہیں رہی۔

جوابی کارروائی کریں گے : وینکیا نائیڈو
بنگلورو۔ 2 مئی (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو نے پاکستان کو ’’بگڑا ہوا ملک ‘‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ حکومت دو ہندوستانی سپاہیوں کی ہلاکت کے خلاف مناسب کارروائی کرے گی۔ انہوں نے پاکستان پر دہشت گردی کے لئے فنڈس فراہم کرنے اور کشمیر کے حالات پر اثر انداز کا الزام عائد کیا۔ اپوزیشن کی جانب سے مرکزی حکومت کے سیاسی حوصلہ کے بارے میں اٹھائے گئے سوالات پر وینکیا نائیڈو نے ریمارک کیا کہ ’’جب یہ حوصلہ ہوگا ، تب ہلاکتیں بھی ہوں گی‘‘ ، لیکن انہوں نے اپنے اس بیان کی صراحت نہیں کی۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ہمارا موقف بالکل مضبوط ہے اور جو کچھ ممکن ہو ، ہم کریں گے اور حکومت یہ کام کررہی ہے۔ آپ کو بہت جلد حکومت کے جواب کے بارے میں معلوم ہوجائے گا۔

TOPPOPULARRECENT