Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی عوامی سماعت کا اہتمام

قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی عوامی سماعت کا اہتمام

8 تا 10 اپریل عوام ،مسلم تنظیمیں ، نمائندے کمیشن سے رجوع ہوسکتے ہیں

8 تا 10 اپریل عوام ،مسلم تنظیمیں ، نمائندے کمیشن سے رجوع ہوسکتے ہیں
حیدرآباد ۔ 6 اپریل ۔(سیاست نیوز) سماجی ناانصافیوں کو دور کرنے کیلئے کئے جانے والے اقدامات کے تحت قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی جانب سے 8 تا 10 اپریل حیدرآباد میں عوامی سماعت مقرر ہے ۔ اس عوامی سماعت میں صدرنشین قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات جسٹس وی ایشوریا صدرنشین کمیشن کے علاوہ دیگر اراکین موجود رہیں گے ۔ مسلمانوں کو قومی سطح پر پسماندہ طبقات کی فہرست میں شامل کرنے اور تحفظات کی فراہمی کے سلسلہ میں ہونے والی اس عوامی سماعت میں سیاسی ، سماجی ، تنظیمیں اور عوام خود اپنے تجاویز و نمائندگیاں پیش کرسکتے ہیں۔ قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی اس سہ روزہ عوامی سماعت کے دوران اگر مسلم تنظیمیں اور نمائندے کمیشن سے رجوع ہوتے ہوئے قومی سطح پر پیشہ کے اعتبار سے پسماندہ مسلمانوں کو پسماندہ طبقات کی فہرست میں شامل کرنے کیلئے نمائندگی کرتے ہوں تو ایسی صورت میں قومی سطح پر مسلمانوں کو تحفظات حاصل ہونے کے امکانات روشن ہونے کی توقع کی جاسکتی ہے۔ اندرا پریہ درشنی باغ عامہ میں 8، 9 اور 10 اپریل کو ہورہی اس عوامی سماعت کے متعلق رکن قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات جناب شکیل الزماں انصاری نے بتایا کہ اس سماعت کے دوران تمام پسماندہ طبقات سے نمائندگیاں وصول کی جائیں گی اور کمیشن کی جانب سے موصول ہونے والی نمائندگیوں کی بنیاد پر طبقات کی فہرست میں شمولیت یا اخراج کافیصلہ کیا جائے گا۔ آندھراپردیش ریاستی اقلیتی کمیشن صدرنشین جناب عابد رسول خان کے علاوہ جمعیۃ علمائے ہند کی جانب سے قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات سے نمائندگی کرتے ہوئے معاشی طورپر پسماندہ مسلم طبقات کو پسماندہ طبقات کی فہرست میں شامل کرنے کی نمائندگی کئے جانے کی توقع ہے ۔ علاوہ ازیں ماہرین کا کہنا ہے کہ قومی کمیشن کی اس عوامی سماعت میں بی سی ( ای ) زمرے کے تحفظ اور اسے آندھراپردیش سے وسعت دیتے ہوئے قومی سطح پر شامل کرنے میں بھی مدد حاصل ہوسکے گی ۔ ریاست آندھراپردیش میں مسلمانوں کو 4% مسلم تحفظات کی قانونی جدوجہد میں سرگرم جمعیۃ علمائے ہند کی جانب سے بہتر انداز میں نمائندگی کی جاسکتی ہے ۔ ریاست تلنگانہ میں موجود دیگر مسلم تنظیموں کے ذمہ داران کو بھی چاہئے کہ وہ اس سہ روزہ عوامی سماعت میں شریک ہوتے ہوئے اپنے دلائل پیش کریں تاکہ انھیں قومی سطح پر سماجی عدم مساوات و ناانصافیوں سے چھٹکارا حاصل ہوسکے ۔ قومی کمیشن برائے پسماندہ طبقات کی جانب سے پیشہ کے اعتبار سے 14 زمروں کو جن سے مسلمان وابستہ ہیں انھیں پسماندہ طبقات کی فہرست میں شمولیت کیلئے نمائندگیاں وصول کی جائیگی ۔ ریاست آندھراپردیش کی تقسیم کے بعد کمیشن کی یہ پہلی سماعت ہے جس میں پسماندہ طبقات کی فہرست ازسرنو مرتب کرنے کیلئے عوامی تجاویز حاصل کی جارہی ہیں۔ ریاست آندھراپردیش میںمسلمانوں کو 4% تحفظات کی فراہمی کیلئے جس طرح تجاویز حاصل کی گئی تھیں اسی طرز پر اب قومی کمیشن کی سماعت مقر ہونے جارہی ہے۔مسلم تنظیمیں ، ادارے و انجمنیں 9 اور 10 اپریل کو اندرا پریہ درشنی میں صبح 10 بجے سے شروع ہونے والی عوامی سماعت میں اپنا موقف پیش کرسکتے ہیں۔ 8 اپریل کو اکثریتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے طبقات کیلئے وقت متعین کیا گیا ہے لیکن اس دن آریہ کٹکا کے ساتھ قریش برادری کی سماعت بھی مقرر ہے اور قریش برادری 8 اپریل کو بھی رجوع ہوتے ہوئے اپنا موقف پیش کرسکتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT