Saturday , November 25 2017
Home / ہندوستان / لاؤڈ اسپیکر ضبط کرلینے عدالت کا انتباہ

لاؤڈ اسپیکر ضبط کرلینے عدالت کا انتباہ

صوتی آلودگی روکنے سپریم کورٹ کے احکامات پر عمل آوری کی ہدایت
چینائی۔ 21 جون (سیاست ڈاٹ کام) مدراس ہائیکورٹ نے آج خبردار کیا ہے کہ مذہبی مقامات بشمول مساجد میں استعمال ہونے والے لاؤڈ اسپیکرس کی آواز سپریم کورٹ کی مقررہ حد میں نہ رکھی گئی تو حکام اسے ضبط کرلیں گے۔ چیف جسٹس سنجے کشن کول اور جسٹس آر مہادیون پر مشتمل بینچ نے ایک شہری کی دائر کردہ مفاد عامہ کی درخواست پر یہ انتباہ دیا۔ اس درخواست میں حکومت اور پولیس کو لاؤڈ اسپیکر کے استعمال کے بارے میں سپریم کورٹ کے 18 جولائی 2005ء کو جاری کردہ احکامات پر سختی سے عمل آوری کی ہدایت دینے کی خواہش کی گئی ہے۔ آج جب یہ معاملہ سماعت کے لئے پیش ہوا تو بینچ نے فیڈریشن برائے مساجد اور شریعت پروٹیکشن فورم، چینائی کو ماخوذ کیا جو اس درخواست میں چوتھے مدعی علیہان ہیں۔ فورم کی جانب سے وکیل آر عبدالمبین نے کہا کہ ماہ رمضان کے بعد وہ تمام مساجد کے ذمہ داروں کو اس ضمن میں ہدایت دیں گے۔ بینچ نے اس یقین دہانی کو قلمبند کرتے ہوئے کہا کہ دیگر مساجد کو بھی اس ضمن میں سرگرمی کے ساتھ اقدامات کرنا چاہئے، تاہم بینچ نے اسسٹنٹ انسپکٹر جنرل پولیس کی مختلف مذہبی اداروں کی جانب سے عدم تعمیل پر مشتمل رپورٹ کا جائزہ لینے کے بعد کہا کہ ان تمام کو ہدایت دی جاتی ہے کہ آئندہ تین دن میں اس بات کو یقینی بنائے کہ لاؤڈ اسپیکر کی آواز مقررہ حد میں ہو، بصورت دیگر حکام لاؤڈ اسپیکرس ضبط کرلیں گے۔ درخواست گذار نے بتایا کہ مذہبی اور دیگر تقاریب کے دوران بالخصوص صبح کے وقت لاؤڈ اسپیکر کا استعمال انتہائی تکلیف دہ ہوتا ہے۔ اس ضمن میں کئی مرتبہ انہوں نے مقامی پولیس میں شکایت درج کرائی لیکن کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔

TOPPOPULARRECENT