Sunday , December 17 2017
Home / ہندوستان / لا93 لاکھ ٹرک آپریٹر س کی ملک گیر ہڑتال کاآغاز

لا93 لاکھ ٹرک آپریٹر س کی ملک گیر ہڑتال کاآغاز

لا93 کھ ٹرک آپریٹر س کی ملک گیر ہڑتال کاآغاز
ہڑتال کے پہلے دن معیشت کو 2000 کروڑ روپئے کا نقصان : ملکیت سنگھ

ممبئی ۔9 اکٹوبر۔( سیاست ڈاٹ کام) ملک بھر کے ٹرک آپریٹرس نے ’’جی ایس ٹی ‘‘ ڈیزل کی بھاری قیمتوں اور سڑکوں پر حکام کی ہراسانی کے خلاف آج دو روزہ ہڑتال شروع کی اور پہلے ہی دن معیشت کو 2000 کروڑ روپئے کانقصان پہونچنے کا دعویٰ کیا گیا ہے ۔ آل انڈیا موٹر ٹرانسپورٹ کانگریس ( اے آئی ایم ٹی سی ) کی کور کمیٹی کے چیرمین بال ملکیت سنگھ نے کہاکہ ’’ہم نے آج صبح سے دو روزہ چکہ جام ( ٹرانسپورٹ ہڑتال ) شروع کیا ہے ۔ جیسا کہ ہم پہلے اس کا اعلان بھی کرچکے تھے ۔ ملک بھر کے ٹرانسپورٹرس ، جی ایس ٹی ، ڈیزل کی قیمتوں ، ٹرک آپریٹرس کو ہراسانی ،سڑکوں پر رشوت ستانی اور ٹول پالیسیوں کے خلاف اُٹھ کھڑے ہوئے ہیں‘‘ ۔ انھوں نے کہا کہ ممبئی میں ٹرک آپریٹرس کی جانب سے من گھرت چک پوسٹ پر احتجاجی دھرنا منظم کیا گیا ۔ ممبئی میں آج صبح سے ہی ٹرکس سڑکوں سے غائب رہے ۔ اکثر ٹرانسپورٹ گاڑیوں کو شاہراہوں پر ہی پارک کردیا گیا ہے ۔ بال ملکیت سنگھ نے دعویٰ کیا کہ ملک کے ٹرانسپورٹرس کی دیگر کئی تنظیموں نے بھی اس ہڑتال کی تائید کی ہے ۔ اگر اس ہڑتال سے عوام کو کوئی تکلیف یا دشواری ہوئی تو اس کی ذمہ داری حکومت پر عائد ہوگی ۔ انھوں نے مزید کہاکہ ملک میں 93 لاکھ ٹرک آپریٹرس اور دیگر ٹرانسپورٹس کو دم گھٹادینے والی سرکاری پالیسیوں کے سبب بھاری نقصانات اور ہراسانی کاسامنا ہے چنانچہ یہ تمام ( ٹرانسپورٹرس) آج ہڑتال پر ہیں ۔ انھوں نے کہاکہ ’’یہ ہماری علامتی ہڑتال ہے حکومت اگر ہمارے مطالبات کی یکسوئی نہیں کرتی ہے تو دیوالی کے بعد ہم غیرمعینہ مدت کی ہڑتال کی اپیل کریں گے ‘‘ ۔ بمبئی موٹر ٹرانسپورٹ آپریٹرس فیڈریشن ، مبمئی ٹرانسپورٹ کوآپریٹیو کنزیومرس سوسائٹی ، مہاراشٹرا ٹینکر لاری اونرس اسوسی ایشن بھی اس ہڑتال میں حصہ لے رہے ہیں۔ بال ملکیت سنگھ نے کہا کہ ’’اب وقت آگیا ہے کہ حکومت کو ڈیزل پر عائد ٹیکسوں کو معقول بنانا چاہئے اور بین الاقوامی مارکٹ کے خطوط پر اس (ڈیزل) کی قیمت کو کم کیا جائے ۔ سارے ملک میں ڈیزل کی قیمت کو یکساں بنانے کیلئے اس کو بھی جی ایس ٹی میں زمرہ کیا جانا چاہئے اور سہ ماہی بنیاد پر اس کی قیمتوں پر نظرثانی کی جانی چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT