Monday , July 23 2018
Home / سیاسیات / لوک سبھا اجلاس ایک ماہ طویل تعطیلات کیلئے ملتوی

لوک سبھا اجلاس ایک ماہ طویل تعطیلات کیلئے ملتوی

اے پی کو خصوصی موقف دینے تلگودیشم اور وائی ایس آر کانگریس کا مطالبہ
نئی دہلی 9 فروری (سیاست ڈاٹ کام) آندھراپردیش کو مزید مرکزی امداد کی فراہمی کے مطالبہ کے ساتھ اس ریاست کے ارکان کے مسلسل احتجاج کے درمیان لوک سبھا کا اجلاس تقریباً ایک ماہ کی تعطیلات کے لئے آج ملتوی کردیا گیا۔ حکمراں این ڈی اے کی حلیف تلگودیشم کے علاوہ اپوزیشن وائی ایس آر کانگریس کے ارکان نے وقفہ صفر کے دوران احتجاج جاری رکھا۔ وقفہ سوالات کے لئے جیسے ہی آج دن کااجلاس شروع ہوا خلل کے سبب کارروائی ملتوی کردی گئی۔ ایوان میں آج کی مصروفیات کی فہرست پیش کرنے کے بعد اسپیکر سمترا مہاجن نے کارروائی ملتوی کردی۔ ایوان کی آئندہ نشست 5 مارچ کو ہوگی۔ اس کے ساتھ ہی لوک سبھا میں بجٹ سیشن کا پہلا نصف مکمل ہوگیا۔ تلگودیشم اور وائی ایس آر کانگریس کے تقریباً 15 ارکان جو پلے کارڈس تھامے ہوئے تھے نعرے لگاتے ہوئے ایوان کے وسط میں جمع ہوگئے تھے۔ کانگریس کے ارکان بھی پلے کارڈس تھامے ہوئے اور رافیل لڑاکا طیاروں کی معاملت پر حکومت سے جواب دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے ایوان کے درمیان میں جمع ہوگئے۔ تلگودیشم کے رکن این سیوا پرساد راؤ نے انوکھااحتجاج کیا۔ انھوں نے طویل سیاہ اور بھورے بال سے بنی ایک وِگ پہن کر سب کی توجہ راغب کی۔ کارروائی کے التواء کے بعد تلگودیشم کے بعض ارکان نے ایوان میں کچھ دیر بی جے پی کے سینئر لیڈر ایل کے اڈوانی سے بات چیت کی۔ تلگودیشم نے جمعرات کو واضح کیا تھا کہ آندھراپردیش کو خصوصی زمرہ کا موقف دینے کے مطلبہ کی پذیرائی تک احتجاج جاری رکھا جائے گا۔ وزیر فینانس ارون جیٹلی نے احتجاجی ارکان کو منگل کے روز تیقن دیا تھا کہ اس ریاست سے متعلق مختلف مسائل پر مرکز ہمدردانہ غور کرے گا۔

TOPPOPULARRECENT