Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / لیبیا پولیس اسکول پر خودکش بم حملہ ، 60 ہلاک

لیبیا پولیس اسکول پر خودکش بم حملہ ، 60 ہلاک

کوسٹ گارڈس کی تعداد زیادہ ،دولت اسلامیہ کی کارستانی ، ہنوز حکومت عدم موجود

طرابلس ۔ /7 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) لیبیا کے مغربی شہر جلیٹن میں واقع ایک پولیس ٹریننگ سنٹر پر خودکش ٹرک بم دھماکہ کیا گیا ۔ اس میں کم از کم 60 افراد ہلاک ہوئے ۔ جنگ سے متاثرہ اس ملک میں اب تک ہونے والے حملوں میں یہ سب سے خطرناک مہلک ترین حملہ تھا ۔ ایک خودکش بم بردار نے دھماکو اشیاء سے بھرے ہوئے ٹرک کو لیکر وسط جلیٹن میں واقع ایک پولیس اسکول میں گھسادیا ۔ یہ ٹرک عام طور پر پانی لانے والی ٹینکر تھی ۔ لیبیا کے دارالحکومت طرابلس کے مشرقی علاقے میں واقع 170 کیلو میٹر دور ساحلی شہر میں یہ کارروائی کی گئی ۔ وزارت صحت کے ترجمان عامر محمد عامر نے کہا کہ دھماکے میں 60 افراد ہلاک ہوگئے ہیں اور 200 سے زائد زخمی بتائے جاتے ہیں ۔ زخمیوں کو کئی دواخانوں میں شریک کیا گیا ہے اور خون کے عطیہ کیلئے فوری اپیلیں کی جارہی ہیں ۔ اس حملے کی فوری طور پر کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی ہے ۔ تاہم دولت اسلامیہ گروپ پر شبہ کیا جارہا ہے جس نے حالیہ دنوں میں لیبیا کے اندر خود کو طاقتور بنالیا ہے ۔ اس گروپ میں ملک کے اندر کئی مرتبہ خودکش حملے بھی کئے ہیں ۔

اقوام متحدہ کے سفیر برائے لیبیا مارٹن کوبلر نے اس حملے کی مذمت کی اور کہا کہ عالمی امن کیلئے ضروری ہے کہ سب متحد ہوجائیں ۔ ان حملوں کی مذمت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تمام لیبیا کے باشندوں کو اس نازک گھڑی میں ملکر کام کرنا ہوگا ۔ دہشت گردی کے خلاف متحد ہوکر جدوجہد کرنے میں ہی کامیابی ملے گی ۔ میں اس حملے کی شدید مذمت کرتا ہوں ۔ دہشت گرد گروپ میں طرابلس پر اقتدار سنبھالا تو حکومت کو مجبوراً مشرقی علاقے میں پناہ لینا پڑی ۔ اقوام متحدہ یہاں پر اقتدار میں حصہ داری کے معاہدے کو قبول کرانے کیلئے دونوں حریفوں پر دباؤ ڈال رہا ہے ۔ /17 ڈسمبر کو اقوام متحدہ کی نگرانی میں دونوں فریقین کے درمیان بات چیت بھی کی گئی ۔ دونوں جانب کے ارکان کو دیگر آزاد سیاسی قائدین کی بھی تائید حاصل ہے ۔ اور ایک متحدہ حکومت بنانے کیلئے باقاعدہ معاہد پر دستخط بھی کی گئی ۔ لیکن اب تک حکومت تشکیل نہیں پاسکی ۔

TOPPOPULARRECENT