ماحولیات کے تحفظ کو یقینی بنانے مرکزی حکومت کوشاں

مرکزی وزیر ماحولیات و جنگلات پرکاش جاویڈکر کا خطاب

مرکزی وزیر ماحولیات و جنگلات پرکاش جاویڈکر کا خطاب
حیدرآباد ل/13 نومبر ( سیاست نیوز ) مرکزی وزیر ماحولیات اور جنگلات مسٹر پرکاش جاوڈیکر نے کہا کہ ماحولیات کے تحفظ کو یقینی بنانے کیلئے مرکزی حکومت کوشاں ہے اور ترقی کے معاملہ میں کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا ۔ مرکزی وزیر آج یہاں حیدرآباد میں ایک پریس کانفرنس کو مخاطب کررہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ ماحولیات کے تحفظ اور جنگلات کی ترقی کیلئے مرکزی حکومت مثالی اقدامات کر رہی ہے ۔ انہوں نے جنگلات سے قدرتی وسائل کی چوری اور اسمگلروں پر افسوس ظاہر کیا ۔ اور سرخ صندل کے اسملگروں کے خلاف سخت کارروائی کا انتباہ دیا ۔ مرکزی وزیر نے سرخ صندل کی اسمگلنگ کی مکمل روک تھام کیلئے موثر میکانیزم کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ دونوں ریاستوں کے وزراء اعلی سے ربط قائم کرتے ہوئے سرخ صندل کو بچایا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ آندھراپردیش اور ٹامل ناڈو کی ریاستی حکومتوں سے بات چیت کرتے ہوئے اسمگلنگ کو روکنے کے اقدامات کئے جائیں گے ۔ انہوں نے سرخ صندل کی اسمگلنگ میں مزدوروں کے پکڑے جانے اور اصل سرغنوں کی پردہ پوشی پر افسوس ظاہر کیا اور کہا کہ مرکزی حکومت اس مسئلہ پر سنجیدگی سے غور کر رہی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ جنگلات کی اہمیت کے لحاظ سے ترقیاتی کاموں کو بھی کافی اہمیت دی جارہی ہے اور 90 فیصد فنڈ کو ریاستوں کے حوالے کیا جائے گا اور این او سی کیلئے مرکز کے بجائے ریجنل سطح سے اجرائی و اجازت کے اقدامات کو یقینی بنایا جائے گا ۔ انہوں نے بتایا کہ اس خصوص میں 24 نومبر کے دن پہلی کونسل CAMPA اجلاس کا انعقاد عمل میں لایا جارہا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ گرین انڈیا اور کلین انڈیا مشن کے تحت اقدامات کئے جائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ مودی حکومت ایک ہاتھ میں ہری جھنڈی اور دوسرے ہاتھ میں ترقی کا جھنڈہ کے نعرہ سے آگے بڑھ رہی ہے ۔ مرکزی وزیر مسٹر پرکاش جاوڈیکر نے کہا کہ جنگلات کی تفصیلات کے تعلق سے جو رپورٹ سرکاری سطح سے حاصل ہوں گی جو ریاستی حکومتوں اور ریاستی سطح کے اداروں کی ہوں گی سے انہیں سیٹلائیٹ تصاویر اور اطلاعات کے ذریعہ جانچ کیا جائے گا اور اس کی تصدیق خود کرلی جائے گی ۔ انہوں نے بتایا کہ جی آئی ایس کی مدد سے تصدیق کے کام کو آگے بڑھایا جائے گا ۔ مرکزی وزیر نے کہا کہ دنیا بھر میں ماحولیاتی تبدیلی ہو رہی ہے اور ہر حال میں اس بات کو ماننا پڑے گا کہ سمندری حالات بدل رہے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ سونامی کے بعد احتیاطی اقدامات سے ہیلن ، ہد ہد اور نیلوفر کے خطرات اور تباہی سے کافی حد تک بچنے میں کامیابی ملی ہے ۔ اس موقع پر محکمہ جنگلات کے اعلی افسران موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT