Sunday , May 27 2018
Home / Top Stories / ماقبل انتخابات بحث سے گریز کیلئے پارلیمنٹ اجلاس میں تاخیر

ماقبل انتخابات بحث سے گریز کیلئے پارلیمنٹ اجلاس میں تاخیر

دلتوں، کاشتکاروں اور غرباء کے دلوں میں مودی اور روپانی کی کوئی جگہ نہیں ، راہول گاندھی کا بیان
سانند ۔ 24 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نائب صدر کانگریس راہول گاندھی نے آج الزام عائد کیاکہ حکومت پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں اس لئے تاخیر کررہی ہے کیونکہ وہ صدر بی جے پی امیت شاہ کے فرزند جے، رافیل سودے اور ڈوکلم صف آرائی پر گجرات انتخابات سے قبل بحث کرنا نہیں چاہتی۔ ان کا یہ تبصرہ نئی دہلی میں سرمائی اجلاس کے 15 ڈسمبر سے آغاز کے اعلان سے چند گھنٹے قبل منظرعام پر آیا جبکہ دوسرے مرحلہ کے گجرات اسمبلی انتخابات ایک دن قبل ہوچکے تھے۔ عام طور پر سرمائی اجلاس کا آغاز نومبر کے تیسرے ہفتہ میں ہوتا ہے اور یہ ڈسمبر کے تیسرے ہفتہ تک جاری رہتا ہے۔ راہول گاندھی نے احمدآباد میں انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے پارلیمنٹ بند کردی ہے۔ ہر سال نومبر میں پارلیمنٹ کھل جاتی تھی اس سال ایسا نہیں ہوگا۔ وہ انتخابات سے پہلے پارلیمنٹ کھولنا نہیں چاہتے اور صدر بی جے پی امیت شاہ کے فرزند، رافیل کے سودے اور ڈوکلم صف آرائی پر بحث کرنا نہیں چاہتے۔ گجرات اسمبلی انتخابات 9 اور 14 ڈسمبر کو دو مرحلوں میں مقرر ہیں۔ انہوں نے چیف منسٹر گجرات وجئے روپانی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دلتوں کے دیوقامت ترنگے کو قبول کرنے سے ان کے عملہ نے جگہ نہ ہونے کا بہانہ کرتے ہوئے انکار کردیا۔

نائب صدر کانگریس نے کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی اور چیف منسٹر روپانی صرف صنعتکاروں کے دل میں ہیں۔ دلتوں، کاشتکاروں اور غرباء کے دلوں میں ان کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ وہ فنون کی تربیت کے ادارے سانند میں دلتوں کے ایک اجتماع سے خطاب کررہے تھے جو دلت شکتی کیندر کے زیراہتمام منعقد کیا گیا تھا۔ اس موقع پر انہوں نے 240 گرام وزنی 125 فیٹ طویل اور 83.3 فیٹ طویل دیوقامت ترنگا بطور تحفہ عطا کیاگیا۔ راہول گاندھی نے کہا کہ اگر آپ 15 کیلو میٹر یا 50 ہزار کیلو میٹر طویل پرچم بھی مجھے عطا کرتے تو میرے پاس چاہے ایک انچ کی جگہ بھی نہ ہوتی میں اسے حاصل کرلیتا۔ میرے دل میں ایسے پرچم کیلئے بہت بڑی جگہ موجود ہے۔ یہ بی جے پی کے چیف منسٹروں یا وزیراعظم کی ذہنیت ہے جس کی وجہ سے انہیں اتنی محنت سے تیار کردہ ترنگے کیلئے جگہ نہیں ملتی۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعظم یا چیف منسٹر گجرات اونا دلت برادری کو زدوکوب کرسکتے ہیں۔ ایک دلت محقق روہت ویمولا کی حیدرآباد یونیورسٹی میں خودکشی کے بعد اسے برادری سے خارج کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس ہندوستان کے ہر دیہات سے چھوت اچھوت کا خاتمہ کرناچاہتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT