Saturday , November 25 2017
Home / ہندوستان / مالیگاؤں مقدمہ عدالتوں پر چھوڑ دینے کا مشورہ

مالیگاؤں مقدمہ عدالتوں پر چھوڑ دینے کا مشورہ

وجئے ملیا کو واپس لانے ہرممکن کوشش جاری ‘ مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی کے بیان
نئی دہلی ۔16مئی ( سیاست ڈاٹ کام ) اپوزیشن کی جانب سے دائیں بازو کے خلاف دہشت گردی مقدمات میں مودی حکومتکے  الزامات میں نرمی پیدا کرنیکے الزام پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی نے کہا کہ یہ معاملہ عدالتوں پر چھوڑ دینا چاہیئے ۔ اگر کوئی بات غلط یا نامناسب ہو تو عدلیہ اس کا جائزہ لے گا ۔ کانگریس پر جوابی تنقید کرتے ہوئے انہوں نے الزام عائد کیا کہ جب یو پی اے برسراقتدار تھی تو اُس نے صیانتی محکموں کو ’’ من دھڑک فرد جرم ‘‘ عائد کرنے کیلئے استعمال کیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ ایسے تمام مقدمات میں عدالتوں نے ملزمین کو مقدمہ چلائے بغیر ہی بری کردیا ۔ انڈین ویمنس پریس کورٹ پر اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ قانونی معاملات ہیں اور انہیں عدالتوں پر چھوڑ دیا جانا چاہیئے ‘ وہی ہر غلطی یا نامناسب بات کا جائزہ لیں گی ۔ ان سے کانگریس کے الزام پر کہ سادھوی پرگیہ اور دیگر کے خلاف حکومت نے الزامات سے دستبرداری اختیار کرلی ہے ‘ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے انہوں نے یہ مشورہ دیا ۔ انہوں نے بی جے پی زیر اقتدار ریاستوں میں نصابی کتابوں میں ترمیم کرتے ہوئے اپوزیشن پارٹیوں سے تعلق رکھنے والی عظیم شخصیتوں کا تذکرہ حذف کردینے کے الزام پر انہوں نے کہا کہ بھگوا پارٹی جب بھی برسراقتدار آئی اور نصابی کتابوں میں ترمیم کی گئی ایسے ہی الزامات عائد کرنا اپوزیشن کا معمول ہے ۔ جب وضاحت کی جاتی ہے تو وہ اس کا جائزہ لئے بغیر برعکس تصویر پیش کرتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ الزام کی تفصیلات کا جائزہ لئے بغیر وہ کچھ بھی کہنے سے قاصر ہیں ۔ وجئے ملیا کو برطانیہ کی جانب سے ہندوستان کی تحویل میں دینے سے انکار کے بارے میں انہوں نے کہا کہ تحقیقاتی محکمے ہر ممکن کوشش کریں گے کہ انہیں وطن واپس لایا جائے تاکہ وہ قانون کا سامنا کرسکیں ۔ انہوں نے کہا کہ اخراج اور تحویل میں دینا دو مختلف باتیں ہیں ۔ برطانیہ عام طور پر سفری دستاویزات کے درست ہونے کی صورت میں کسی کے بھی اخراج سے انکار کرتا ہے لیکن قانون کا سامنا کرنے کیلئے کسی ملزم کو ہندوستان کی تحویل میں دینا ایک قانونی طریقہ کار ہے اور یہ راستہ ہنوز صیانتی محکموں کیلئے دستیاب ہے ۔وہ وجئے ملیاکو ہندوستان واپس لانے کی ہر ممکن کوشش کررہے ہیں تاکہ وہ قانون کا سامنا کرسکے اور اس کے ساتھ انصاف ہوسکے ۔ مالیگاؤں بم دھماکے کے مفرور رام چندر کل سانگرا اور سندیپ سانگے مبینہ طور پر آر ایس ایس کے کارکن ہیں۔ گذشتہ ہفتہ این آئی اے نے ان پر فردجرم عائد کیا تھا جس میں انہیں آر ایس ایس کارکن قرار دیا گیا ہے۔ دریں اثناء شیوسینا کے قائد سنجے راوت نے کہا کہ کانگریس مالیگاؤں دھماکے مقدمہ کو سیاسی رنگ دے رہی ہے لیکن ایسا کرنا قوم کے مفاد میں نہیں ہے۔ بی جے پی قبل ازیں کانگریس پر الزام عائد کرچکی ہیکہ اس نے سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکر کو اس مقدمہ میں پھنسایا تھا۔ بی جے پی کے قومی سکریٹری شری کانت شرما نے یہ الزام عائد کیا تھا۔ شیوسینا کے قائد سنجے راوت نے آج کہا کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا ۔ کانگریس نے یو پی اے دورحکومت میں ہی اس مسئلہ کو سیاسی رنگ دے دیا تھااور اب اس سے فائدہ اٹھانے کوشاں ہے۔

TOPPOPULARRECENT