Tuesday , December 19 2017
Home / Top Stories / مالی میں ہوٹل پر تخریب کاروں کا حملہ ‘ 170 یرغمالوں میں 22 ہلاک

مالی میں ہوٹل پر تخریب کاروں کا حملہ ‘ 170 یرغمالوں میں 22 ہلاک

20 ہندوستانی یرغمالوں کی بحفاظت رہائی ۔ بندوق بردار سکیوریٹی فورسیس کے ہاتھوں ہلاک ‘ بحران ختم ‘ وزیر سلامتی مالی کا ادعا

باماکو ( مالی ) 20 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) مسلح تخریب کاروں نے یہاں ایک ڈیلکس ہوٹل پر صبح کی اولین ساعتوں میں حملہ کیا اور یہاں 170 افراد کو کمرے میں بند کردیا تھا جن میں سے کم از کم 22 کو ہلاک کردیا گیا جبکہ 20 یرغمال بنائے گئے ہندوستانیوں کو کوئی گزند پہونچائے بغیر رہا کردیا گیا ۔ مالی کے دارالحکومت شہر کی ریاڈیسن بلیو ہوٹل میں تخریب کاروں نے صبح کی اولین ساعتوں میں یہ حملہ کیا تھا اور انہوں نے خود کار اسلحہ سے بے دریغ فائرنگ کی ۔ مالی کے وزیر سکیوریٹی سالیف تراؤرے نے تقریبا 9 گھنٹوں بعد سکیوریٹی فورسیس کے ہاتھوں دونوں بندوق برداروں کی ہلاکت کے بعد یرغمال بحران ختم ہونے کا اعلان کیا ۔ تراؤرے نے نیوز کانفرنس میں کہا کہ فی الحال تخریب کاروں کے قبضہ میں کوئی یرغمال نہیں ہے اور سکیوریٹی فورسیس انہیں ڈھونڈ نکالنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ سکیوریٹی ذرائع نے کہا کہ کم از کم 22 افراد یرغمال بنائے جانے کی کوشش میں ہلاک ہوگئے ہیں۔ بی بی سی نے ایک ایجنسی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسلامک مغرب میں برسر کار القاعدہ اور المرابطون نے اس حملہ کی ذمہ داری قبول کی ہے ۔ خارجہ سکیوریٹی سے متعلق ذرائع نے شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ پڑوسی برکینا فاسومیں مقیم فرانسیسی خصوصی افواج اس ہوٹل میں مقیم تھیں جو مالیانس کے قریب میں کارروائی میں مصروف تھیں۔ اس دوران وزارت خارجہ ہند کے ترجمان نے ٹوئیٹ کیا کہ اچھی خبر یہ ہے کہ باماکو میں ہوٹل میں مقیم تمام 20 ہندوستانی محفوظ ہیں اور ان کا تخلیہ کروالیا گیا ہے ۔ یہ ہندوستانی دوبئی کی ایک کمپنی کے ملازم ہیں اور اس ہوٹل میں مستقل مقیم تھے ۔ سکیوریٹی ذرائع نے بتایا کہ بندوق بردار 190 کمروں والی اس ہوٹل کے کمپاؤنڈ میں سفارتی پلیٹ رکھنے والی گاڑیوں میں داخل ہوئے تھے اور پھر باہر سے فائرنگ کی آوازیں سنی گئیں۔ ہوٹل کے مالکین کا کہنا ہے کہ ہوٹل میں ابھی بھی 138 افراد موجود ہیں جن میں فرانسیسی ‘ ترک اور چینی شہری شامل ہیں تاہم یہ لوگ یرغمال نہیں ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT